۱۴ تیر ۱۴۰۱ |۵ ذیحجهٔ ۱۴۴۳ | Jul 5, 2022
News Code: 368030
27 اپریل 2021 - 19:56
شیخ بہشتی

حوزہ/ علامہ اقبال ہمیشہ اپنے باپ کی اس بات پر سخت متاثر  تھے کہ "تم جب  بھی قرآن مجید کی تلاوت  کرو یوں  سمجھ  لوکہ گویا  قرآن تم پر نازل  ہو رہا ہے  یعنی  تم خدا کے ساتھ ہم کلام ہو رہے  ہو"۔

تحریر: حجۃ الاسلام و المسلمین محمد حسین بہشتی

حوزہ نیوز ایجنسیعلامہ اقبال ہمیشہ اپنے باپ کی اس بات  پر سخت متاثر  تھے کہ انہوں  نے فرمایا  ( تم جب  بھی قرآن مجید کی تلاوت  کرو یوں  سمجھ  لوکہ گویا  قرآن تم پر نازل  ہو رہا ہے  یعنی  تم خدا کے ساتھ ہم کلام ہو رہے  ہو)  قرآن مجید کے  الفاظ علا  ّمہ  اقبال  کے دل وروح  پر اس طرح  نازل ہوتے ہیں قرآن مجید  کے معانی  ومفاہیم  بیان کرنے کے حوالے سے ہم انہیں تیار پاتے ہیں ایک دن گورمنٹ  کالج لاہور کے وائس چانسلر نے علامہ اقبال سے سوال  کیا تمھاری نظر میں معنا ومفاہیم  قرآن بھی تمھارے ۔  پیغمبر صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم  پر نازل  ہوتے  تھے اور آن حضرت  صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم  اس کو اپنے الفاظ  میں بیان  فرماتے تھے ؟  یا الفاظ بھی مفاہیم  کی طرح  پیغمبر کے قلب مبارک پر نازل  ہوتے تھے ؟  علامہ اقبال  جواب  میں فرماتے  ہیں قرآن  مجید کی عبارت  عربی زبان میں عین  اسی شکل میں نازل  ہوئی  جو وحی  کی صورت میں نازل ہوئی تھی  کالج کے چانسلر    تعجب  سے کہنے  لگے  میں اس  بات کو سمجھنے  سے  قاصر  ہوں کہ تم جیسے  عظیم  مفکر  اور فیلسوف قرآن کے اوپر  کس قدر ایمان  رکھتے ہیں ! علا  ّمہ اقبال  ان کے سوال  کے جواب  میں فرماتے ہیں جناب  ڈاکٹر  صاحب میں کوئی  پیغمبر  نہیں ہوں  میں صرف  ایک شاعر ہوں لیکن شعر کہنے کے وقت ایک خاص حالت مجھ پر ظاہر ہوتی ہے ۔  اور شعر خود بخود  مرتب ہو کر میرے  اوپر نازل  ہوتے ہیں اور میں ان اشعار کو کسی قسم کی کمی  و بیشی کے بغیرثبت کر تا ہوں کبھی  میں ان  اشعار  کی  اصلاح کرنا بھی  چاہتا  ہوں تو اصل شعری  کی صورت  ہی میں باقی رکھتا  ہوں۔  یہ حقیقت  ہمیشہ  موجود  ہے کہ  زمان  ومکان  کے حوالہ سے کو‏ئی شعر  کسی شاعر  کے اوپر  نازل و ظاہر  وظہور  پذیر  ہو یہ کو‏ئی  تعّجب کرنے  کامقام  نہیں  ہے کہ  قرآن مجید  الفاظ و معانی  کی صورت  میں ہمارے  پیغمبر  گرامی  اسلام  پر نازل  ہو  اور  یہ ایک زندہ معجزہ  آج  بھی  پوری انسانیت  کے سامنے  موجود ہے ۔
قرآن کی طرف رجوع :قرآن کی طرف  متوجہ  ہونا  موجودہ    دور کے عظیم دانشوروں  ، اسکالروں  اور  مفکرین  کا اہم  ترین اصلاحی پہلو ہےمفکروں کی نظر میں مسلمانوں  کی پشماندگي  اور زوال کی  اصل  وجہ  قرآن  کی طرف  تو جہ نہ کرنا  ہے علا  ّمہ اقبال ان مفکروں اور  دانشوروں میں سے ایک ہیں  جو اعتقاد  رکھتے ہیں کہ  قرآن  کو حفظ  اور اس کے حقائق  کو ظاہر  ہونا چاہیے ۔ 
حفظ قرآن عظیم آئین تست                                                                                                                                  حرف حق را فاش  گفتن دین تست
اقبال اپنے  شعری  منظومہ ، جاوید  نامہ  میں دین مبین اسلام اور سیرت  پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم  کی غربت کو قرآن کی طرف بے تو جھی کو قرار  دیتے  ہیں اور متذکر  ہوتے  ہیں کہ عصر حاضر  میں مسلمانوں کو چاہیے  قرآن  کی معرفت  میں آیات  الہی کے بارے میں غور وفکر  سے کام لیں  جو امت  اسلامیہ کی  بیداری  قرآن مجید میں مضمر ہے ۔ 
از یک آئین مسلمان  زندہ است

پیکرامت  ز قرآن زندہ است

علا  ّمہ اقبال کی نظر میں قرآن مجید ہی ہمیں حقیقت  بین ، واقعیت پرست  اور حق پرست  انسان  میں تبدیل  کر سکتا  ہے لہذا  ہمیں  چاہیے  کہ مکمل طور پر جو کچھ  قرآن نے کہا ہے اس کے اوپر  عمل کرنا چاہیے  علا  ّمہ  اقبال  مسلمانوں کے قول   وفعل  سے نالاں اور قرآن و سیرت  پیغمبر اکرم سے خالی  ہونے کے حوالہ سے یوں گویا ہیں ۔
منزل و مقصود قرآن دیگر است                                    رسم و آئین  مسلمان دیگر است
در  دل او آتش سو زندہ نیست                              مصطفے در سینہ ای او زندہ نیست
بندۂ مؤمن ز قرآن بر نخورد                                             در ایا او نہ می دیدم نہ درد
یہی  سبب ہے  کہ آج  ایک بار پھر امریکہ  کی سامرا جی طاقت  مسلمانوں کو غلام  بنانے کے میدان عمل  میں اتر چکا ہے اس کی بہترین  مثال  اقغانستان  ، عراق  وغیرہ  ہے اگر  مسلمان  مذید  خواب  خرگوش  میں رہے  تو تمام  اسلامی ممالک  کو نگل جائے  گا لہذا مسلمانوں  کو چاہیے قرآن تعلیمات  اور سیرت  طیبہ  کے اوپر سختی سے عمل پیرا  ہوتے  ہوئے  زمانے  کی طاقتوں  کو میدان  سے باہر کردیں ۔ اس کے لیے  مسلمان  کو قرآن کی طرف پلٹنے کی اشد ضرورت  ہے اس حوالہ سے صحیح  قسم  کی قرآن  کی تفسیر  اور تاویل کی طرف توجہ  کرنا  بیداری کی علامت  بن سکتی ہے اس بنیاد  پر علا  ّمہ  اقبال  نے اپنی  مشہور  و معروف  کتاب ( احیای  تفکر  دینی  در اسلام )  میں مختلف  آیات سے استفادہ  کیا ہے  اور اپنے  نظریات  کو قرآن کی روشنی میں بیان  فرماتے  نظر آتے ہیں  قرآن مجید  کی آیات  پر غور  وفکر  اور اس  کے معانی  و مفاہیم  میں پوری  توجہ  سے تلاوت  کرنا ایک مسلمان کے فرائض میں  سے ایک فرض سمجھتے  ہیں تاکہ  بنی  نوع انسان کی ترقی  وکمال ، صحت  وسلامتی  ، امن   وامان    اور ایک  مضبوط  فلاحی   معاشرہ  کےلیے قرآن مجید ہی کو  واحد  کتاب  نجات  انسانیت  سمجھتے ہیں  اور   اسلامی انسانی  تعلیمات  ثبوت وحدوث وجود   کا محور  تصّور کرتے ہیں  
آن کتاب  زندہ قرآن حکیم                                          حکمت اولا یزان است و قدیم
رہزنان  از حفظ او رہبر شدند                                              از کتابی صاحب دفتر شدند
گر تو می خواہی مسلمان  زیستن                                        نیست  ممکن جزبہ قرآن زیستن
قرآن کتاب بیداری : قرآن مجید آگاہی  وبیدار ی  کی کتاب ہیں ۔ قرآن مجید  پیغمبر اکرم صلی للہ علیہ وآلہ وسلم  کا عظیم  ترین اور بہترین  معجزہ ہے یہ مقدس کتاب مشعل راہ و ہدایت  ہے سچےّ  اور مخلص  انسانوں کے لیے  پوری تاریخ انسان میں ظہور اسلام سے اب تک یہ  کتاب ھدایت ہے اور راھنما ہے انسانوں کی نشیب و فراز ہیں اند ھیری  اور تاریک راتوں میں نور ھدایت ہے واقعیت اور حقیقت پسندانہ زندگی گزارنے والون کے لیے یہ کتاب روشنی  ہے علامہ اقبال  کا عقیدہ تھا صاحب نظر اور اصول پسند ہو نا قران کے حوالہ سے انسان کے لیے خود  بیداری کی ایک عظیم علامت ہے ۔
نقش قران تا در این عالم نشست                                  نقش ھای  کا  ہن  و  پا  پا  شکست
فاش گویم انچہ در دل مضمر است                                                                                                                            دین کتابی  نیست چیزی دیگر است
چون بجان دریافت جان دیگر شود                                جان  چو  دیگر  شد  جہان  دیگر  شود
پس علامہ اقبال اپنے اشعار کو جاری رکھتے ہوئے  غیبت کی خبر، قرآن پیشین  گوئی کو مسلمانوں اور امت مسلمہ کے لیے باعث بیداری اور روشنی قرار  دیتے ہوئے اشارہ کر تے ہیں اور فرماتے ہیں۔
مثل حق پنھان و ھم پیدا  ست این                                      زندہ و پایندہ و گو یا ست این
اندر  و تقدیر ھای  غرب  و  شرق

سر عت اندیشہ پیدا کن چو برق
با مسلمان گفت جان بر کف بنہ

ھر چہ از حاجت فزون داری بدہ
افریدی    شرع   و   آئینی    دگر                                                                                                                            اندکی     با      نور     قرانش   نگر
 حضرت  علامہ اقبال  نے زندگی کو سمجھنے اور دنیا کی جہان بینی کو درک کر نے  کے لیے کا ئنات کے پو شیدہ رازوں کو کشف وانکشاف کے لیے قران کو بہترین ذریعہ اور و سیلہ تصور کر تے ہیں ۔
از بم وزیر حیات آ گاہ  شو                                                  ھم زتقدیر حیات آگاہ شو
محفل ما بی می و بی ساقی  است                                       ساز قرآن را نو اھا باقی است
علامہ اقبال کی نگاہ میں (اسلامی اور قرآنی  تعلیمات ) ان کے دوبارہ زندہ ہو نے کو اللہ  تبارک و تعالی کی طرف سے عقل و خرد اور ہو ہشیاری و بیداری انسان کو قرار دیا ہے اسی لیے خدا و منان نے قرآن مجید میں فرمایا :افلاتتفکرون،افلا تتدبرون،افلا تعقلون،افلا تشعرون ) اگر مسلمان اس قرآنی پیغام پر عمل کریں ہزاروں اقبال منشاء شہود یا منظر شہود پر ظاہر ہو جائیں یہ سب کچھ قرآن میں غور و فکر شعور و آگاہی  سے دنیا میں دین سمجھ میں اسکتا ہے ۔
در واقع دین کیا ہے ؟
چیست دین  ؟
دریافتن  اسرار خویش                                                     زندگی مرگ است بی دیدار  خویش
اند کی گم  شو بہ  قرآن  و  خبر                                          با زای  نادان بہ خویش اندر نگر
عمل کی روح اور بنیاد :قرآنی  آیات  پر عمل کرنے کے حوالے  سے تاکید کی گئی  ہے اور عمل کرنے کی اہمیت سے کسی  شخص مسلمان  کو انکار  بھی  نہیں ہے تمام  اسلامی تعلیمات  میں چاہیے  وہ  جتماعی  ، اقتصادی ، سیاسی ، سماجی،  معاشی اور معاشرتی دیگر تمام  پہلوؤں میں قرآنی   تصوّر  نہایت  روشن  اور واضح  اور آشکار ہے علا  ّمہ  اقبال  رحمۃ  اللہ علیہ  کا عقیدہ  یہ ہے قرآن  وہ کتاب ہے جس پر عمل کرنے  اور فکر کرنے کی زیادہ  تاکید کی گئی ہے اس حوالہ  سے اس فکر کی اور نظریہ  کی تقویت کے لیے ایک  آزادہ  انسان  کے لیے  قرآن میں  واضح  الفاظ  میں فرمایا ہے :                                            ﴿إِنَّا عَرَضْنَا الْأَمَانَةَ عَلَى السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ وَالْجِبَالِ فَأَبَيْنَ أَنْ يَحْمِلْنَهَا وَأَشْفَقْنَ مِنْهَا وَحَمَلَهَا الْإِنْسَانُ إِنَّهُ كَانَ ظَلُومًا جَهُولا 
ترجمہ : بیشک  ہم نے امانت  کو آسمان و زمین  اور پہاڑ سب کے سامنے پیش کیا ہے اور سب نے اس کے اٹھانے سے انکار کیا اور خوف ظاہر کیا ۔ بس انسان اس بوجھ کو اٹھالیا ۔ علا  ّمہ اقبال رحمۃ اللہ علیہ  نظر انسان، خود آگاہ  دنیا کے نشیب  وفراز سے سبق حاصل کرلیتا ہے اس طرح  اپنی دنیا وآخرت سنوار نے کی فکر کرتا  ہے اور حقیقت  میں یہی سچےّ  مسلمانوں کی عین بد بختی  اور تباہی وبر بادی  کا سبب بنا ہے اس لئے علا  ّمہ اقبال کہتے ہیں:
فکر انسان بت پرستی بت گری                                          ہر زمان  در جست وجو ی پیکری
باز طرح آزری اندختہ است                                                تازہ تر پروردگار ی ساختہ است
آدمیت کشتہ شد چون گوسفند                                          پیش  پای  این  بت  نا ارجمند
علا  ّمہ اقبال رحمۃ اللہ علیہ  کا نظریہ  یہ ہے زندہ لوگوں میں شامل ہونے کےلیے قرآن سے درس لیے بغیر کوئی چارا نہیں ہے اگر حقیقی زندگی گزار  نے ہے تو قرآن سے مستمسک ہو جاؤ
انسان کامل :انسان کامل کے بارے میں علا  ّمہ اقبال  کا نظریہ  نہایت  اہم اور بڑی اہمیت کا حامل  ہے وہ فرماتے  ہیں انسان  جب تمام  نفسیاتی  وانسانی خواہشات  سے بے  نیاز  ہو کر  فقط  وفقط  خدا کی غلامی کو  قبول کرے  اور دنیا  میں آزاد  ہو کر جئیں آزاد  ہو کرعمل  کریں غرض تمام مادی  چیزوں   سے ماوراء  ہو کر زندگی کرنے  کا نام  انسان  کامل  ہے علا  ّمہ اقبال  اپنے اسرار  خودی میں قرما تے ہیں:
بندہ   حق بی  نیا ز  ا ز   ہر  مقام                                        نی غلام   او    را ، نہ اوکس را غلام
علامہ اقبال کا عقیدہ ہے مرد کامل اپنے اعراض  ومقاصد اور اہداف  اصلی کو پا نے کےلیے مثل حضرت علی علیہ السلام آمادہ پیکار  ہوجا تاہے جب تک زمانہ اس کے  ہدف  تک نہیں پہونچتا ہے آرام نہیں کرتا  ہے علا  ّمہ اقبال  حقیقت  جو انسان  تھے  وہ مغرب کے جدید  انسان جو مکمل طور  پر فساد اور تباہی میں غرق  سے بیزار  تھے  اورمشرق کے مردوں اور بے تحرک انسان  سے بھی متنفر تھے اسی  وجہ سے علا  ّمہ اقبال ایک جید انسان کے گروہ کی توقع  کرتے تھے  لیکن علا  ّمہ اقبال   کے آثار کو دیکھ کر اندازہ ہوتا ہے  اور ان کے شعروں سے مشخص  ہے کہ  ان کے نظریہ میں ایک انسان  کامل کی مثال حضرت علی بن ابی  طالب علیہ السلام ہیں اور آپ جیسے انسان بنی نوع  بشر بھی ہے ۔

رمز بےخودی :علا  ّمہ اقبال کی نگاہ میں خودی  وہی شناخت اور ملّت  وامت  محمد  صلی اللہ علیہ وآلہ  وسلم کی عزّت  وآبرو ہے جو  عام  مسلمانوں  کا بھی  عقیدہ  ہے کہ جو شخص  اپنی  تہذیب  وثقافت سے متاثر  ہو یا  قبول کرنے  کو بے خودی کا نام  دیتے ہیں  علا  ّمہ اقبال فرماتے ہیں : 
خودی کو کر بلند  اتنا  کہ ہر تقدیر  سے پہلے
خدا بندہ  سے خود  پوچھے بتاتیری رضا کیا ہے
علا  ّمہ اقبال رحمۃ اللہ علیہ  نے اپنے  شعر ی منظومہ  (رموز نے خودی ) میں اس بات  کی کوشش کرتے ہیں  کہ ایک سچےّ مسلمان  کو اسلامی اور قرآن  تعلیمات  سے آگاہ  کرنے  کےلیے  آپ سورہ توحید کو ایک انسان  خودی  سے ربط دیتے  ہیں اور انسان خودی کے لیے  سورہ  اخلاص  بہترین  نمونہ  قرار  دیتے ہیں علا  ّمہ اقبال  اللہ الصمد  کی تفسیر  میں فرماتے ہیں :
علامہ اقبال اس آیت ( ولم یکن لہ  کفواً احد ) کی تفسیر میں مسلمانوں کی فکری  اور اعتقادی  برتری کو دنیا کے دوسری قوموں کے مقابل  ثابت کرنے اور مسلمانوں کو آگاہ کرنے اور سمجھانے کی کوشش فرماتے ہیں تاکہ  مسلمان دوسری قوموں کے مقابل  کم ترنہ سمجھیں  اور احساس کمتری میں مبتلانہ ہو جائيں ۔ 

بعد از این کہ علا  ّمہ اقبال اس بات طرف اشارہ کرتے ہیں کہ  تم نے قرآن کو چھوڑ دیا  ہے
حالا نکہ یہ مقدس کتاب مایہ حیات  اور ہم سب کے اسلامی  اور انسانی  شناخت  ہیں اور ہماری دین اور دنیا  کی کامیابی اور عزّت  وآبروی اس کتاب اور دین سے وابستہ ہے۔
قرآن میں عرفان و معرفت : علا  ّمہ اقبال رحمۃ اللہ علیہ  کی نظرمیں  روح اسلا م کانشان  یعنی اسلامی معاشرےکی شنا خت ایسی ہونی چاہئیے  جس کے اوپر قرآن حاکم ہو، اسلامی تعلیمات حاکم  ہوں علا  ّمہ اقبال  خود جوانی میں احکام شریعت کی پایندی، واجبات کی ادائیگی  کے علاوہ  مستحبی امور پر عمل کرتے  تھے  مثال کے طور پر نماز  شب پڑھنا ، قرآن  مجید کی تلاوت  کرنا خصوصاً سحر کے وقت بیدار  ہونا آپ کے پسندیدہ کا موں میں سے تھا۔

بر خور از قرآن اگر خواہی ثبات                                            در ضمیر دیدہ ام آب حیات
می دہد ما را پیام لا تخف                                                  می رساند بر مقام لا تخف
قنوت سلطان و میر از لا الہ                                                ھیبت مر د فقیر از لا الہ
علا ّمہ صاحب را ز ورنگ الہی پیدا  کرنے کا طریقہ کچھ اس طرح بیان کرتے ہیں ۔
گوہر دریای  قرآن سفتہ ام                                                  شرح رمز  صبغۃ الہ گفتہ ام
تا دو   تیغ لا و الا دا شتیم                                                  ماسوی اللہ رانشان نگذاشتیم
حضرت علامہ اقبال رحمۃاللہ علیہ کی نگاہ میں قرآن کی روش یہ ہے کہ جب داستان ہبوط  یعنی حضرت آدم  اور حوا علیھما السلام کی جنتّ  سے نکلنے کی داستان بیان فرماتے ہیں تو ظاہر  ایک قسم کی جزئی اور کلی  داستان معلوم ہوتی ہے اور اس واقعہ کو زمان ومکان سے منطبق کر کے  صرف  ایک تاریخ واقعہ  قرار نہیں  دیا جا سکتا اور یہ  قرآن  کے ہدف اور مقصد کے خلاف ہے بلکہ قرآن کے اس واقعہ کے پیچھے  ایک مقصد اور ہدف  کلی اخلاقی  اور فلسفی  مضمر اور پوشیدہ   راز میں ہی بنی نوع بشر کی ترقی و کمال موجود ہے اقبال کا عقیدہ  ہے داستان  ہبوط  یعنی آدم وحوا  علیھا السلام  جنت سے نکلنے کا واقعہ  قرآن  مجید  میں ایک بہت بڑا پیغام  ہے وہ  یہ ہے  معرفت خدا حاصل کرنا  اوّل العلم معرفۃ  الجبّار وآخر الامر تفویض امر الیہ ۔ قرآن مجید  میں انسان کا ملا ئکہ  پر افضل ہونے کے بارے میں بحث ہے علا  ّمہ اقبال کی نظر میں معرفت  خدا وند العزّت  کے لیے جو بھی جد وجہد  کریں بنیاد ی طور پر یہ ایک قسم کی مناجات  اور عبادات  دین میں شامل  ہے ایک مقام پر علا  ّمہ اقبال  نے بنی  نوع انسان کے تقسیم کومثال کے طور پر قوم وملّت  اور قبیلوں کی شکل میں ہونے کو خود فرآن کے مطابق صرف  اورصرف  پہچا ننے کا ایک  قانوں  بتایا  ہے اس    حوالہ سے تمام انسان حضرت آدم علیہ السلام  کی اولاد  میں سے ہیں لہذا  اس قسم  کی فوقیت اور برتر ی کسی  دوسرے پر نہیں ہے ۔ تاریخ قرآن کی نظرمیں  کوئی من گھڑت کہانی اور قصہ  نہیں  ہے یہ بدعت  بادشاہوں  اور سلاطین نے ڈالی  ہے بلکہ تاریخ ایک حقیقت  کا نام  ہے جیسے علا  ّمہ  اقبال  نے علم  اور معرفت  کا سمندر کہا ہے ظاہر  سی بات  ہے کہ ہم قرآن میں آدم وحوا  کی  تاریخ  پڑھتے ہیں  اور ہم  اس سے ہم کتنے  نتائج  اخذ  کرتے  ہیں اس طرح  تمام انبیاء اور صالحین ، متقین  اور مومنین  کی تاریخ قرآن میں موجود ہے جو رہتی  دنیا کے لیے ہدایت  ہے وہ  ابن خلدون  کی کتاب کے مقدمہ کو ایک قسم کا جو ہر قرار دیتے  اس حوالہ سے علامہ اقبال ابن خلدون کو تاریخ  فلسفہ  کے باپ  تصور کرتے ہیں جو خود قرآن مجید  سے الہام  لیا  گیا  ہے  قرآن  مجید میں جو تاریخ کے حوالہ سے آیات  بیان ہوئیں  ہیں یہ خود ایک قسم کا قانون ہے  بنی نوع بشر کے لیے قرآن مجید میں ایک  عظیم قسم کے تاریخی فلسفی  اورمنطقی  نظریہ موجود ہیں  یہ بجای خود انسانیت کےلیے  ایک بہت بڑا سرمایہ ہے ۔
چیست دین ؟ 
دریافین اسرار خویش
زندگی مرگ است بی دیدار  خویش
آن مسلمانی کہ بیند خویش را
از جہانی برگزیند خویش را
اندکی  گم شو بہ قرآن وخبر
بازای نادان بخویش اندرنگر
تا دلش سری زاسرار خداست
حیف اگر از خویشتن نا اشناست
از حجاز وچین  وایرانیم ما
شبنم  یک صبح خندانیم ما

قرآن مجید مورخین، مصنفین  اور مولفین کے لیے تحقیق اور جستجو کی دعوت دیتا ہے اس حوالے سے کا علم الرجال کا علم بھی قرآن سے سر چشمہ  لیا ہے لہذا علامہ  اقبال  کا  نظریہ  یہ ہے آیندہ  آنے  والوں کے لیے  قرآن  مجید ایک عظیم الہی سرمایہ ہے جسطرح  تاریخ اسلام میں ابن اسحاق  ،طبری ،مسعود ی  نکل آئے ہیں اسی طرح آنے والے زمانہ میں بھی ایسے عظیم علمی فکری ، سیاسی ، سماجی ، معاشی اور معاشرتی  شخصیات  نکل آئیں گی ۔

تبصرہ ارسال

You are replying to: .
3 + 13 =