۶ آذر ۱۴۰۰ |۲۱ ربیع‌الثانی ۱۴۴۳ | Nov 27, 2021
جھارکھنڈ

حوزہ/حکومت نے ایک فیصلہ لیا ہے جس کے تحت اسمبلی میں ایک کمرہ الاٹ کیا گیا ہے ، جہاں مسلم معاشرے کے لوگ نماز پڑھ سکتے ہیں۔

حوزہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق،رانچی/ جھارکھنڈ اسمبلی کے اسپیکر نے ایک حکم جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ مسلم ممبران اسمبلی کے لیے اسمبلی میں نماز پڑھنے کے لیے الگ جگہ مختص کی جائے گی۔ حکومت کے اس فیصلے کے بعد تنازعہ بڑھ گیا ہے اور بی جے پی نے اس کی مخالفت کرتے ہوئے حکومت کو نشانہ بنایا ہے۔ اس معاملے پر بی جے پی نے اپنی مخالفت کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہر مذہب کے لوگوں کے لیے عبادت گاہ ہونی چاہیے۔

بی جے پی لیڈر ورانچی داس نے کہا ، 'حکومت نے ایک فیصلہ لیا ہے جس کے تحت اسمبلی میں ایک کمرہ الاٹ کیا گیا ہے ، جہاں مسلم معاشرے کے لوگ نماز پڑھ سکتے ہیں۔ تو جب مسلم معاشرہ نماز پڑھ سکتا ہے تو پھر ہندو مذہب سے ہنومان چالیسہ کیوں نہ پڑھا جائے۔ میں معزز اسمبلی کے اسپیکر سے گزارش کرتا ہوں کہ جس طرح آپ نے مسلم کمیونٹی کو نماز پڑھنے کے لیے ایک کمرہ الاٹ کیا ہے ، اسی طرح کم از کم پانچ کمرے یا ایک ہال ہمارے لیے بھی ہنومان چالیسہ کے لیے مختص کریں ، کیونکہ تعداد میں تو ہم مزید لیجئے.

झारखंड की विधानसभा में नमाज की व्यवस्था भारत के संविधान के सिद्धांतों के साथ खिलवाड़ हैं

झारखंड के निर्माण का उद्देश्य आदिवासियों का विकास था, लेकिन तुष्टिकरण की अंधी दौड़ में आदिवासियों का भी अपमान किया जा रहा हैं

नमाज के ये आदेश अनुचित है, और वापस लिया जाना चाहिए pic.twitter.com/VnOxng6a6Q

- Kapil Mishra (@KapilMishra_IND) September 4, 2021

حکومت کے اس فیصلے کو غیر آئینی قرار دیتے ہوئے دہلی بی جے پی لیڈر کپل مشرا نے کہا ، 'جھارکھنڈ قانون ساز اسمبلی میں نماز کا اہتمام ہندوستان کے آئین کے اصولوں کے ساتھ کھیل رہا ہے۔ جھارکھنڈ کی تخلیق کا مقصد قبائلیوں کی ترقی تھی لیکن تسکین کی اندھی دوڑ میں قبائلیوں کی بھی توہین کی جا رہی ہے۔ نماز کا یہ حکم نامناسب ہے ، اور اسے واپس لیا جانا چاہیے

تبصرہ ارسال

You are replying to: .
4 + 10 =

تبصرے

  • ں بUnknown IR 00:54 - 2021/09/05
    0 0
    ھندوستان کے مسلمانوں کو مبارک ہو۔ 74 سال میں اب جاکر ایک کمرہ تو ملا