۶ مهر ۱۴۰۰ |۲۰ صفر ۱۴۴۳ | Sep 28, 2021
حرم مولا عباس ع

حوزہ/ مسلح افواج کے جنرل اسٹاف کی سرچ کمیٹی کے کمانڈر نے حضرت عباس (ع) کے حرم میں 8 ستمبر کی صبح بوقت طلوع آفتاب ایک نوجوان کی شفا یابی کے بارے میں ایک کہانی بیان کی۔

حوزہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق، مسلح افواج کے جنرل اسٹاف کی سرچ کمیٹی کے کمانڈر سردار سید محمد باقر زادہ نے سرچ کمیٹی برائے شہداء کی گمشدگی اور معراج الشھداء کے سرکاری چینل پر شائع ہونے والے صوتی پیغام میں حضرت ابوالفضل العباس علیہ السلام کی کرامت بیان کرتے ہوئے کہا : کل رات ، سید شہداء علیہ السلام کی زیارت کے بعد ، میں صبح 3 بجے کے قریب حضرت عباس (ع) کے حرم گیا، میں نے زیارت پھر نماز پڑھی اور زیارت کے بعد کی دعا پڑھی، پھر سلام کے لئے گیا۔

میں نے ایک لمحے کے لیے دیکھا کہ وہاں ایک لمبا ، پتلا نوجوان تھا ، اور اس کا دوست اس کے ساتھ تھا ،" اس نے نوٹ کیا کہ مریض زیادہ تر وہاں آتے تھے اور دعا مانگتے تھے ، اور میں ایک بیمار نوجوان کے قریب کھڑا تھا، نوجوان کی ٹانگیں ڈھیلی تھیں اور اس کا چہرہ اور نگاہیں ایسی تھیں کہ وہ دیکھ نہیں سکتا تھا۔ میں اس سے دو میٹر دور تھا وہ کہہ رہا تھا کہ میں ٹھیک ہو گیا۔

باقر زادہ نے کہا: میں نے محسوس کیا کہ وہ اندھا شفا یاب ہو گیا اور اس کی بینائی آہستہ آہستہ آ رہی ہے۔ اس کا دوست اس کے پاس آیا اور اس نے حیران ہو کر اس سے سوالات پوچھے تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جا سکے کہ اس کی بینائی آگئی ہے جبکہ نوجوان خود حیران تھا۔

لاپتہ افراد کی کمیٹی کے کمانڈر نے مزید کہا: میں بھی آگے بڑھا اور اس کے سر اور چہرے پر ہاتھ رکھا اور دیکھا کہ اس نوجوان کے ہاتھ پر ٹیٹو بھی تھا۔ میں بہت حیران تھا اور ملکوت اور دنیا کے درمیان سرحد کا لمحہ دیکھا۔

تبصرہ ارسال

You are replying to: .
8 + 1 =