۲۹ شهریور ۱۴۰۰ |۱۲ صفر ۱۴۴۳ | Sep 20, 2021
بزم استعارہ

حوزہ/بزم استعارہ، قم المقدسہ میں مقیم اردو زبان شعراء کی بزم ہے۔ اس بزم کو ہر ہفتے باقاعدگی سے ایک شعری نشست منعقد کرنے کا اعزاز حاصل ہے۔ اس ہفتے کی شعری و تنقیدی نشست کا اہتمام بزم کے معزز رکن جناب زین العابدین خوئی کے گھر کیا گیا۔ 

حوزہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق، بزم استعارہ، قم المقدسہ میں مقیم اردو زبان شعراء کی بزم ہے۔ اس بزم کو ہر ہفتے باقاعدگی سے ایک شعری نشست منعقد کرنے کا اعزاز حاصل ہے۔اس ہفتے کی شعری و تنقیدی نشست کا اہتمام بزم کے معزز رکن جناب زین العابدین خوئی کے گھر کیا گیا۔ 

شریک شعرائے کرام:

اس بزم میں شریک شعرا کے اسماء گرامی درج ذیل ہیں:
 جناب احمد شہریارؔ، جناب ابراہیم نوریؔ،  مولانا سید ضیغمؔ نقوی بارہ بنکوی،
مولانا زین العابدین خوئی،جناب حیدر جعفری، جناب،جناب سید اسد کاظمی، دانش بلتستانی،جناب کاچو اظہر، جناب ارشد سراغؔ، اور جناب عباس ثاقب۔


منتخب اشعار:

جناب احمد شہریارؔ:

اس خاک میں اترتے ہیں کس انہماک سے
کچھ لوگ آسمان سے، کچھ لوگ چاک سے

تو استواء کی دھوپ ہے قطبِ شمال میں
تجھ سے یہاں کوئی نہ ملے گا تپاک سے

تیری جگہ گر اور کوئی پھول سونگھ لوں
جلتی ہے سانس، خون ٹپکتا ہے ناک سے

تجھ راہ میں کھلے ہوئے پھولوں کو کیا خبر
یوں خاک میں ملیں گے نکلتے ہی خاک سے

بارش برس رہی ہے کہ میں اشکبار ہوں؟
انگور ہیں کہ اشک ٹپکتے ہیں تاک سے؟

احمد شہریار
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جناب ابراہیم نوری:

نظم درد دل(سانحہ مچھ کوئٹہ)

لہو میں لت پت ہے پھر سے  
میرے وطن کا دامن
میرے وطن کے
ستم رسیدہ، شریف شہری
غضب کی سردی میں۔۔
مائیں، بہنیں،جوان،بوڑھے سبھی 
خلاف ستم دوبارہ
سر خیاباں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

گھروں سے باہر نکل نکل کر
۔سسک سسک کر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بلک بلک کر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تڑپ تڑپ کر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خود اپنے شانوں پہ کوہ ددر و الم اٹھائے 
بحال فریاد و محو ماتم ہیں 
کچھ دنوں سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ اپنے بھائی کو رو رہے ہیں
کچھ اپنے بیٹوں کو رو رہے ہیں
کچھ اپنے بابا کو رو رہے ہیں

بحال گریہ یہ کہہ رہے ہیں:
ہیں ہم بھی باسی اسی وطن کے
تو پھر ہماری ہی جان آخر 
یہاں پہ محفوظ کیوں نہیں ہے؟
سوال حاکم سے کر رہے ہیں؛ 
ہمارے پیاروں کا کس خطا میں
 لہو بہایا گیا دوبارہ؟؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پہ سرد مہرئ حاکمان وطن تو دیکھو
بجائے اظہار تعزیت بس جواب آیا 
یہ ایک  مردہ ضمیر حاکم کا کہ
یہ دھرنا
یہ رونا دھونا
بلیک میلنگ کا ہے بہانہ
سو۔۔۔۔۔۔
اپنے حاکم کی
 بات مانو
کہ 
مت بنو تم بلیک میلر
کہ مت بنو تم بلیک میلر

محمد ابراہیم نوری۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سید ضیغمؔ بارہ بنکوی:

یه کسکا شاہکار حدیث کساء بنی
دین خدا کے واسطے وجہ بقا بنی 

زینب کہیں حسین کهیں فاطمہ بنی
یہ کسکی یادگار حدیث کسا بنی

شان نزول دیکهیے ہو جاےگا عیاں
یہ کسکا شاہکار حدیث کساء بنی

اسکے لئے نہیں ہے کوی قید وقت کی
ہر فصل کی بہار حدیث کساء بنی

جو شخص مضطرب ہے غم روزگار سے
اسکا سکوں قرار حدیث کساء بنی

زہرا حسن حسین علی اور مصطفی
عصمت کا انحصار حدیث کساء بنی

اعمال روز و شب کا ذرا جایزہ وہ لیں
ذہنوں پہ جنکے بار  حدیث کساء بنی

ضیغم خزاں کے دور میں یہ بارہا ہوا
رحمت کا آبشار حویث کساء بنی

ضیغم بارہ بنکوی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جناب ارشدؔ سراغ:

عالی رتبہ کس قدر ہیں فاطمہ 
ہر زمانے میں اَمَر ہیں فاطمہ 

عالمہ ہیں مصطفی کے دین کی 
باپ کی نور نظر ہیں فاطمہ 

سیدہ س کا کوئی بھی ثانی نہیں 
انبیاء سے معتبر ہیں فاطمہ
 
چھین کے حق ان کا جائیں گے کہاں ؟ 
فرش پر اور عرش پر ہیں فاطمہ 

رب اسے جنت میں بھیجے گا ضرور
شیخ سے راضی اگر ہیں فاطمہ

کس طرح اجڑا محمد ص کا چمن 
کس طرح اجڑی مگر ہیں فاطمہ 

اپنے بابا کی جدائی میں سراغ 
آج بھی خستہ جگر ہیں فاطمہ 

ارشد سراغ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حیدر جعفری:

دل کی شکست میری شکستہ دلی سے پوچھ
یہ دل کا مسئلہ ہے تو آکر اسی سے پوچھ

گر پوچھنی ہیں ہجر کے اشکوں کی قیمتیں
تیرے ہی ساتھ گُم ہوئی میری ہنسی سے پوچھ

ان تشنگانِ عشق کی حالت کو دیکھ لے
پانی کی اہمیت کو ذرا تشنگی سے پوچھ

بس ایک بار دل کی عدالت میں کر کھڑا
جو پوچھنا ہو پھر وہاں مجھ سے خوشی سے پوچھ

خوشبو کی ہے تلاش تو پھر اس کے شہر جا
گلشن سے کر سوال وہاں ہر کلی سے پوچھ

حیدر نہ ہو سکے جو سراپا بیاں کروں
المختصر یہ بات مری شاعری سے پوچھ

حیدر جعفری 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سید اسد کاظمی 

نظم(پینٹگ)
اگر میں دھوپ کی کیاری سے اگتی کچھ شعاعوں سے تمہارے جسم سیمیں کو 
کہیں ترسیم کر پاوں
کبھی انوار کی دنیا سے
 کچھ کرنیں اٹھا کر
ایک دوجے میں انہیں جڑ دوں
کہ ان کے سب کنارے جل اٹھیں
اک دوسرے میں خوف سے پیوست رہ جائیں
اگر میں پھر شب تاریک سے کچھ رنگ لے آوں
اسے تم زلف سے تشبیہہ مت دینا
وہ رنگ انمٹ سیاہی کی طرح اجلے بدن پر
تل بنا ڈالے
وہ تل جنکو کسی بھی شعر میں باندھا نہیں جاتا
فقط برتا ہی جاتا ہے
اور وہ بھی اکیلے میں
اگر میں اس مشقت سے تمہارے عکس کو دل  سے بنا لوں
اور تم اسکو مٹا ڈالو
تو پھر سچ سچ بتانا 
تم مجھے کیسے بھلاو گی
مجھے کیسے مٹاو گی

سید اسد کاظمی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کاچو اظہر:

باپ کو بیٹی کی صورت ماں  کا   پُرسہ  دیجیئے
اور علیؑ کو درد کے  درماں  کا  پُرسہ دیجیئے

کھا کے پتھرسہہ کےطعنےآمنہ کےلال  نے
اپنی  امت  پر  کیے احساں کا  پُرسہ  دیجیئے

سال  بھر دیتا  رہا  جس ماں کوپُرسہ لال  کا
آج  اُس  بیٹے کو اُس  کی  ماں کا پُرسہ دیجیئے

پُرسہ دے دیں  اہل اتی کو   آیئہِ تطہیر   کو
مومنو!  قرآن  کو  قرآں   کا  پُرسہ  دیجیئے

یوں زبانِ وحیِ سے گویا ہوےتھے مصطفیؐ
بضعتی  مّنی  کے  اُس  فرماں کا پُرسہ دیجیئے

 کلمہ  گویوں  نے  لگا  کر آگ خاکتسر کیا
علم  کے  اُس  بابِ عالی شاں کا پُرسہ دیجیئے

خوش نصیبی ہےتری اظہر کہ ہے قم میں  ابھی 
قم  کی  شہزادی کو دادی جاں کا پُرسہ دیجیئے

کاچو اظہر عباس
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مولانا زین العابدین خوئی:

سرزمین پاکستان کی وادی بولان میں محنت کش کان کنوں پر ظلم کی روداد پر اپنی تازه نظم:

سنو کہ ظلم هوا 
پهر ایک ظلم هوا
پهر ایک چیخ فضاؤں میں گونجتی ہے سنو
یه ماؤں بیٹیوں بہنوں کی 
آہِ کرب آمیز
کسی یتیم کی آنکهوں سے اشکِ خون، بہا
یہ بلیک میل نہیں کر رہے
بلاتے ہیں
انہیں بھروسہ نہیں اب کسی کے وعدے پر
نہ اعتماد ہے
کرسی نشیں ارادے پر
مگر
جناب نے دل آنسوؤں کا چیر دیا !؟
امیر۔۔۔ تو نے ڈھٹائی سے رَدّ کیا ہے جسے
وہ آہِ مظلوماں
سڑک پہ بیٹھی وہ ماں
یتیم کے ہیں وہ اشک
حدیث میں ہے کہ
مظلوم کی بُکا سے بچو
سِتم رسیدہ کی اس آہ کا 
پتہ کوئی نئیں
 کہ اس کے اور خدا بیچ سدّ رَہ کوئی نئیں
وہ رنج دیدہ کہ 
جس کا خدا سوا کوئی نئیں
نه سن سکو گے تو
سیلاب آنسوؤں کا 
سمندر اُبلتے خون کا 
ظالم تجھے بہا لے گا
یہ خوں بہا لے گا۔۔۔
یہ خوں بہا لے گا۔۔۔

زین العابدین خوئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جناب دانش بلتستانی:

خصوصی چاہیے مجھ کو قلم قاسم سلیمانی 
تری توصیف کرنا ہے رقم قاسم سلیمانی 

اذان اتحاد مومنیں دیتے ہیں مقتل سے 
ابو مھدی مہندس کے بہم قاسم سلیمانی 

اے قاسم بن حسن ٹکڑے بدن کے ہو گئے تیرے 
کٹا سر اور ہوۓ بازو قلم قاسم سلیمانی 

شہادت نے تمھاری روح پھونکی جسم امت میں 
تمھارے دم سے ہے لشکر میں دم قاسم سلیمانی 

ترا نعم البدل قاآنی بننے کی خبر سن کر 
صف دشمن پہ چھاۓ ابر غم قاسم سلیمانی 

حرم کو جاتے ہیں اکثر دعائیں مانگنے اپنی 
دعائیں تجھ کو دیتے ہیں حرم قاسم سلیمانی  

تھا موڑا ایک دن تاریخ کا دھارا خمینی نے 
نئی تاریخ کی تو نے رقم قاسم سلیمانی    

شہادت ایک تازہ  زندگی  ہے اہل ایماں کی 
بدن مٹنے  سے  کب مرتے ہیں ہم قاسم سلیمانی 

لباس روح اے  دانش بدلنا  جانتے ہیں ہم 
ہیں ہم  فرزند روح اللہ  ہم قاسم سلیمانی

دانش بلتستانی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جناب عباس ثاقب:

ہم ایسے لوگ اگر تیرگی کو دیکھتے ہیں
تو نعت لکھتے ہیں اور روشنی کو دیکھتے ہیں

ہمیں تو نعت دکھائی دیا کلامِ خدا
سو آیتوں میں بھی ہم شاعری کو دیکھتے ہیں

سوائے موت کے کچھ بھی نظر نہیں آتا
سوائے آپؐ کے جب زندگی کو دیکھتے ہیں

ہمارے دوش پہ رہتا ہے ان کے فیض کا بار
سو عیش کرتے ہیں کب بے گھری کو دیکھتے ہیں

سلام بھیجوں انہیں تو جواب آتا ہے
وہ دل میں رہتے ہیں، دل کی لگی کو دیکھتے ہیں

جہاں بھی نامِ محمدؐ دِکھا، جھکائی جبیں
ملائکہ مری وارفتگی کو دیکھتے ہیں

شفیعِ حشرؐ نے محشر میں جب پکارا ہمیں
کبھی انہیں تو کبھی بندگی کو دیکھتےہیں

لکھی جو نعت تو سیراب ہو گئیں آنکھیں
کہ میرے لفظ مری تشنگی کو دیکھتے ہیں

بس اک نگاہ سے اتری سفر کی ساری تھکان
وہ میرے جسم کی ہر خستگی کو دیکھتے ہیں

اجل، لحد، سرِ برزخ، صراط، روزِ حساب
قدم قدم پہ تریؐ یاوری کو دیکھتے ہیں

انہی کے عشق سے شعروں میں وزن آتا ہے
سو نغمہ گر بھی مری نغمگی کو دیکھتےہیں

ہمیں ہو فکرِ گریبانِ چاک کیوں، ثاقبؔ!
کہ ہم حضورؐ کی بخیہ گری کو دیکھتے ہیں

عباس ثاقبؔ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تبصرہ ارسال

You are replying to: .
2 + 2 =