۲ آبان ۱۴۰۰ |۱۷ ربیع‌الاول ۱۴۴۳ | Oct 24, 2021
بزم استعارہ

حوزہ/بزم استعارہ، قم المقدسہ میں مقیم اردو زبان شعراء کی بزم ہے۔ اس بزم کو ہر ہفتے باقاعدگی سے ایک شعری نشست منعقد کرنے کا اعزاز حاصل ہے۔ اس ہفتے کی شعری و تنقیدی نشست کا اہتمام بزم کے معزز رکن جناب  حیدر جعفری کے گھر کیا گیا۔ 

حوزہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق، بزم استعارہ، قم المقدسہ میں مقیم اردو زبان شعراء کی بزم ہے۔ اس بزم کو ہر ہفتے باقاعدگی سے ایک شعری نشست منعقد کرنے کا اعزاز حاصل ہے۔اس ہفتے کی شعری و تنقیدی نشست کا اہتمام بزم کے معزز رکن جناب حیدر جعفری کے گھر کیا گیا۔ 

شریک شعرائے کرام:

اس بزم میں شریک شعرا کے اسماء گرامی درج ذیل ہیں:
 جناب صائب جعفری، جناب ابراہیم نوریؔ،  مولانا سید ضیغمؔ نقوی بارہ بنکوی،
جناب ممتاز عاطف،مولانا زین العابدین خوئی،جناب حیدر جعفری، جناب،جناب سید اسد کاظمی، دانش بلتستانی،جناب عامر نوگانوی اورجناب عباس ثاقب۔

منتخب اشعار:

سید ضیغمؔ بارہ بنکوی:

در مدح حضرت ام البنین (ع)
   
اے علی کی رازداں ام البنیں
اے وفا کی پاسباں ام البنیں

اے شرافت کا نشاں ام البنیں
تم پہ ہو قربان جاں ام البنیں

حیدر و شبیر و شبر گهر میں ہیں
ہے ترے گہر میں جناں ام البنیں

آپ  بھی مشہور ہیں باب المراد
عاشقوں کے درمیاں ام البنیں

اور بھی تاریخ میں ہیں بی بیاں
آپکی جیسی کہاں ام البنیں

لے کے عباس علی کو گود میں
دی وفا کی لوریاں ام البنیں

بعد زہرا بھی ہے کوئی شخصیت
ہے جواب اسکا کہ ہاں ام البنیں

ضیغم بارہ بنکوی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


جناب ابراہیم نوری:

تازہ غزل:

آج ناشادآدمی کیوں ہے؟
غم زدہ اسکی زندگی کیوں ہے؟

 دیکھا آنکھوں نے حسن کا پیکر
دل کی دنیا میں بے کلی کیوں ہے؟

تو نے مجھ کو بھلا دیا ہے تو پھر
تیری آنکھوں میں یہ نمی کیوں ہے

کل کی ناراضگی ہے اپنی جگہ
مجھ سے ناراض تو ابھی کیوں ہے؟

اے ہوا،کیا ہوا بتا تو سہی
اب تلک شمع جل رہی کیوں ہے؟

جسکی تعبیر ہی نہیں ملتی
آنکھ وہ خواب دیکھتی کیوں ہے؟

جرم جب میں نے کچھ کیا ہی نہیں
مجھ کو منصف سزا ملی کیوں ہے؟

یار میرے مجھے بتا کہ تیری
مرے دشمن سے دوستی کیوں ہے؟

فخر تھا میری دوستی پہ جسے
اب اسے مجھ سے دشمنی کیوں ہے؟

دم بہ دم نوری شاد رہتا ہے
اسکی غمگین شاعری کیوں ہے؟..
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
محمد ابراہیم نوری
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


جناب صائب جعفری:

بصارتوں کو بصیرت ملی تو یہ جانا
حقیقت ایک ہے وہ تو ہے باقی افسانہ

خیال و خواب کی دنیا سے کیا شغف ان کو
شعور بخش دے جن کو شراب مستانہ

میں سن کے آیا ہوں تیری سخاوتوں کا بیاں
لنڈھا شراب نہ تک یونہی میرا پیمانہ

رقیب حسن نے سجدے میں سر رکھا تو کھلا
ریاضتوں کا ثمر ہے ادائے رندانہ

حجاب غیر سے واجب ہے اے پری وش پر
اٹھا نقاب کہ محرم سے کیسا شرمانا

نظر پڑے جو ان آنکھوں کو نقش پا تیرا
ادا کروں میں اسی سجدہ گہ پہ شکرانہ

یہ عشق ایسے مری چاہتوں کا مان رکھے
رہ وفا میں شہادت کا پاؤں پروانہ

تمام دہر کی تاریکیاں ہیں یوں مایوس
تمہاری یاد سے روشن ہے دل کا کاشانہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صائب جعفری
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جناب ممتاز عاطف:


«غالب» کے مصرع "ہوئی تاخیر تو کچھ باعثِ تاخیر بھی تھا"
پر تضمین  

فسانہ تھا مگر یہ قابلِ تحریر بھی تھا
کہ مخفی اس کے پس منظر میں اک اکسیر بھی تھا

مری آنکھوں سے حال دل سمجھ لینے میں ان سے 
"ہوئی تاخیر تو کچھ باعثِ تاخیر بھی تھا"
 
فراز دار سے بھی چاہتے گر جان بخشی  
یہ ان کا فیصلہ یوں قابلِ تغییر بھی تھا

زبوں حالی کی آخر میں کروں کس سے شکایت
خفا لگتا ہے مجھ سے کاتب تقدیر بھی تھا

بھلے لگنے لگے زنجیر پا کو،  پاؤں عاطف
اسیرِ جرم تھا میں، ہمدمِ زنجیر بھی تھا

ـــ ممتاز حسین عاطف ــــ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جناب حیدر جعفری:

غزل

کسی کے کہنے سے بدلا ہے کب نظامِ وفا
دلوں میں آج بھی باقی ہے نیک نام وفا

مجھے تلاش ہے مدت سے ایسی بستی کی
جہاں پہ چلتا ہو  بس اور بس نظام وفا

 جہاں پہ عشق کی توہین کر نہ پائے کوئی
جہاں پہ کرتے ہوں سب لوگ احترام وفا

جہاں پہ رہتے ہوں آزاد فکر لوگ سبھی
جہاں پہ عشق ہو اور عشق بھی غلام وفا

اے کاش ہم بھی پہنچ کر اسی نگر میں کریں
کہیں پہ صبح محبت، کہیں پہ شام وفا

 وہ جس نے ہاتھ کٹا کر وفا کی لاج رکھی
اسی کے نام سے زندہ ہے آج نام وفا

ہمارے حصے میں بس بے وفائیاں آئیں
وہ کون لوگ ہیں جن کو ملا سلام وفا

نشہ پھر اس کا اترتا نہیں ہے مدت تک
گر ایک بار کسی نے پیا ہو جام وفا

حقیقتوں سے وہ واقف نہیں ہے اے حیدر
لگا رہا ہے جو دنیا میں آج دام وفا

حیدر جعفری
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جناب عامر نوگانوی:

سید اسد کاظمی

غزل

اشک بھر لاتی ہیں شاداب ہوئی جاتی ہیں
جان!آنکھیں مری بے خواب ہوئی جاتی ہیں

تری آواز برستی نہیں بنجر دل پر
باقی دنیائیں تو سیراب ہوئی جاتی ہیں

چار جانب سے سنے جاتے ہیں ناقوس ہوس
شرمگیں صورتیں کمیاب ہوئی جاتی ہیں

کہنے لگتے ہیں اسد کاظمی باتیں اپنی
آپ کیوں عشق میں بے تاب ہوئی جاتی ہیں

اسد کاظمی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


مولانا زین العابدین خوئی:


جناب دانش بلتستانی:

جناب عباس ثاقب:

تازہ غزل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کچھ دنوں سے ڈر رہا ہوں دل کی ویرانی سے میں
بھول بیٹھا ہوں تجھے بھی کتنی آسانی سے میں

رات بھر جلتے رہے یادوں کے رنجیدہ چراغ
رات بھر الجھا رہا آنکھوں کی طغیانی سے میں

چھپ گئے ہیں الجھنوں کی گرد میں سارے خطوط
آئینے کو دیکھتا رہتا ہوں حیرانی سے میں

بھانپ لیتا ہوں کسی خوشبو  کے تیور دور سے
ڈر گیا ہوں اس قدر اک رات کی رانی سے میں

ہے بچانے کی تمنا ڈوبتے مہتاب کو
کھینچتا ہوں روز اس کے عکس کو پانی سے میں

وہ مجھے محسوس ہوتا ہے مگر دِکھتا نہیں
تنگ ہوں احساس کی اس تنگ دامانی سے میں

دشت میں چاروں طرف ہے خشک ہونٹوں کا ہجوم
کب تلک لڑتا رہوں اس تشنہ سامانی سے میں

ثاقباؔ! ایسے ابھر آئیں جبیں پر سلوٹیں
جیسے گزرا ہوں جہاں بھر کی پریشانی سے میں

۔۔۔۔۔۔۔۔
[عباس ثاقبؔ]

لیبلز

تبصرہ ارسال

You are replying to: .
9 + 2 =