۲۸ مهر ۱۴۰۰ |۱۳ ربیع‌الاول ۱۴۴۳ | Oct 20, 2021
استعارہ

حوزہ/بزم استعارہ، قم المقدسہ میں مقیم اردو زبان شعراء کی بزم ہے۔ اس بزم کو ہر ہفتے باقاعدگی سے ایک شعری نشست منعقد کرنے کا اعزاز حاصل ہے۔ اس ہفتے کی شعری و تنقیدی نشست کا اہتمام بزم کے معزز رکن جناب سید عامر نوگانوی کے دولت کدہ پر کیا گیا۔

حوزہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق، بزم استعارہ، قم المقدسہ میں مقیم اردو زبان شعراء کی بزم ہے۔ اس بزم کو ہر ہفتے باقاعدگی سے ایک شعری نشست منعقد کرنے کا اعزاز حاصل ہے۔اس ہفتے کی شعری و تنقیدی نشست کا اہتمام بزم کے معزز رکن جناب سید عامر نوگانوی کے دولت کدہ پر کیا گیا۔ 

شریک شعرائے کرام:

اس بزم میں شریک شعرا کے اسماء گرامی درج ذیل ہیں:

مولانا سید ضیغمؔ نقوی بارہ بنکوی،
مولانا سید احتشام جونپوری،مولانا سید عابد رضا رضوی،
 جناب احمد شہریار، جناب ابراہیم نوریؔ،  
جناب ممتاز عاطف،مولانا زین العابدین خوئی، جناب حیدر جعفری ،جناب ارشد سراغ ،جناب سید اسد کاظمی، دانش بلتستانی، جناب کاچو اظہر،جناب عامر نوگانوی اورجناب عباس ثاقب۔

منتخب اشعار:


مولانا سید احتشام جونپوری:

جو شخص خامشی سے مجھے قتل کر گیا
ہمدرد بن کے پہلے وہی میرے گھر گیا

تڑپا کیا ہوں خوب سے بہتر کی چاہ میں
آسائشوں میں بھی نہ مرا درد سر گیا


بکھرے ہوئے وجود کو اپنے سمیٹ کر
پھیلا کے ہاتھ کوئی سر راہ گھر گیا

محفل میں وہ نگاہ اٹھی اور جھک گئی
کس کو خبر کہ کون جیا کون مر گیا

کس نے سنی حشم وہ صدائے شکست دل
اک آہ گھٹ کے رہ گئی اک شخص مر گیا

مولانا سید احتشام جونپوری
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


سید ضیغمؔ بارہ بنکوی:

مدح امام علی نقی ع:

کسی بشر میں یہ پاکیزگی نہیں ملتی
نبی سے ملتی ہوی زندگی نہیں ملتی
بہت ہوے ہیں زمانے میں طیب و طاہر
مگر مثال علی النقی نہیں ملتی

مدح امام محمد تقی ع:

 پوتے رضا کے، بیٹے محمد تقی کے ہیں
اور والد بزرگ حسن عسکری کے ہیں

اللہ کے ولی ہیں تو نائب نبی کے ہیں
اوصاف یہ امام علی النقی کے ہیں

گر آپ کو لغت ہو کہیں سے بھی دستیاب
معنی نقی کے دیکھیئے پاکیزگی کے ہیں

ضیغم ترے کلام کو معراج مل گئی
چرچے ملائکہ میں تری شاعری کے ہیں

ضیغم بارہ بنکوی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


جناب احمد شہریار:

عجیب شہر ہے یہ، چلتے چلتے تھک گیا ہوں
میاں! میں خضر ہوں اور راستا بھٹک گیا ہوں
۔
مجھے بھی شوق تھا باغ و بُلاغ دیکھنے کا
سو میں بھی آتشِ حرماں میں بے جھجھک گیا ہوں
۔
اب ایک سمت ہے تیغ، اک طرف ہے انگارا
مگر میں رنگِ شفق کی طرف لپک گیا ہوں
۔
مرے بدن پہ زمانوں کی گرد جم گئی ہے
دیارِ خواب میں ہرچند دو پلک گیا ہوں
۔
یہ راستا بہت آساں ہے، تم بھی آجاو 
اسی صلیب سے میں آسمان تک گیا ہوں
۔
احمد شہریار
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


جناب ابراہیم نوری:

تازہ غزل:

میں نے مشکل میں صدا تجھ کو ہی دی ہے جاناں
سو مری آبرو دنیا میں بچی ہے جاناں

اس لئے شوق سے آ بیٹھتا ہوں تیرے قریں
تری زلفوں کی بہت چھاوں گھنی ہے جاناں

تری یادیں تری باتیں تری خوشیاں ترے غم
دل کی دنیا انہیں رنگوں سے سجی ہے جاناں

ہجر اور وصل کے مابین کا لمحہ لمحہ
ترے عاشق کے لئے ایک صدی ہے جاناں

بات جو تو نے کبھی مجھ سے چھپانا چاہی
تری آنکھوں نے وہ چپ چاپ کہی ہے جاناں 

اس کے بارے میں کبھی زحمت پرسش تو کرو
چشم نوری میں جو موجود، نمی ہے جاناں...

محمد ابراہیم نوری
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


سید عابد رضا رضوی:

مکالمہ مجاھد اور اسکی ہونے والی زوجہ کے درمیان کہ جب مجاھد مجروح ہوکر ہسپتال پہنچتا ہے اور اسکی منگیتر اس سے ملنے آتی ہے۔


1۔ میرے زخمی جسم کو تجھ سے لگاؤ ہے بہت
تیرے ایماں  کی صلابت پرجھکاؤ ہے بہت

2 ۔ طے کرو گی کس طرح  درد و الم کا یہ سفر
عاشقوں کے شعر پھیلائیں گے خوشیوں کی خبر

3 ۔ زندگی میری بلاؤں میں گھری ہے مان لو
کربلا کی خاک اپنا لوں گی بس تم  جان لو

4 ۔ گر فنا کی موج تم کو گھیر لے گرداب میں 
ڈوب جاؤں گی میں تیرے عشق کے سیلاب میں

5 ۔ وہ سبب کیا ہے جو میری بن رہی ہو ھم سفر
سب پہ حاوی تیرا ایماں   تو یقیں کرلے اگر

6 ۔ سوچ میری ، میرا باطن جانتی ھو تم بھلا
جانتا ہے میرا خالق  تیرا باطن باخدا

سید عابد رضا رضوی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جناب ممتاز عاطف:

منقبت:

ہے لعاب سروری کا یہ اثر یا معجزہ
تین دن کی عمر میں قرآں سناتے ہیں علی ع

جنگ خندق میں ذرا دیکھو مقابل کفر کے
وہ سراپا کل ایماں بن کے جاتے ہیں علی ع

سو کے بستر پر کبھی، میدان میں جا کر کبھی
جان سرور کی ہمیشہ ہی بچاتے ہیں علی ع

وارثِ علم نبی ہیں بر سرِ منبر تبھی
بیٹھ کر نعرہ سلونی کا لگاتے ہیں علی ع


ـــ ممتاز حسین عاطف ــــ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


ارشد سراغ:

غزل:

لبوں پہ پھول سجانے میں وقت لگتا ہے
نیا کلام سنانے میں وقت لگتا ہے

ہزاروں سال بھی لگتے ہیں اورر دو لمحے
کسی کو اپنا بنانے میں وقت لگتا ہے

یہاں سے جانے میں دو چار دن ہی لگتے ہیں 
وہاں سے لوٹ کے آنے میں وقت لگتا ہے

نکال لیتا ہوں تھوڑا سا وقت اس کے لئے
وگرنہ اسکو منانے میں وقت لگتا ہے 

ہمارے شہر کا ماحول خوشگوار نہیں
کسی کو ہنسنے ہنسانے میں وقت لگتا ہے

سراغ اس کو گھٹانا ہو یا بڑھانا ہو
گھڑی کی سوئی گھمانے میں وقت لگتا ہے

ارشد سراغ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


جناب حیدر جعفری:

نظم (بھائی):

گر ہو بڑا تو مثلِ پدر ملتی ہے شفقت بھائی کی
اور چھوٹا ہو تو رہتی ہے ساتھ محبت بھائی کی

دنیا میں سب سے زیادہ نزدیک فقط پر چھائی ہے 
لیکن اس سے بھی زیادہ نزدیک ہمارا بھائی ہے


لیکن کچھ بھائی تو یوں بھی غلطی میں پڑ جاتے ہیں
  غیروں کی باتوں میں آکر بھائی سے لڑ جاتے ہیں

لیکن جس نے غیروں سے بھی غیروں سے انداز کیا 
اس سے خدا ناراض ہے جس نے بھائی کو ناراض کیا

باپ نے اپنے بعد جو چھوڑی ہے وہ وراثت بھائی ہے
 اے دولت پر لڑنے والوں اصلی دولت بھائی ہے


حیدر جعفری
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


جناب عامر نوگانوی:

مدح معصومہ قم

یا رب سخن کو حسن تجمل کی بھیک دے
زہن قلم فکر و تامل کی بھیک دے
عنواں کو میرے پاک توسل کی بھیک دے
کشکول شاعری کو تخیل کی بھیک دے

واجب ہے مجھ پہلے یہ کامل دعا کروں
پھر خواہر امام رضا کی ثنا کروں


بی بی، تا روز حشر منور ہے تیرا در
بی بی، ہر اک محب کا مقدر ہے تیرا در
بی بی، در بہشت کا منظر تیرا در
بی بی، علوم دین کا محور ہے تیرا در

جس نے بھی ترے در پہ ادب سے  مراد کی
سچ ہے اسی نے  پائی سند اجتہاد کی

سید عامر نوگانوی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


سید اسد کاظمی: 

دشت بے آواز ہے جنگل میں سناٹا نہیں
آسمانوں پر دھنک کا اب کوئی پہرہ نہیں

میں بھی آدھی بات سنتا ہوں، تمہارے فون پر
دیکھ لو جیسے تمہیں بہتر لگے  اچھا نہیں

اے بیابانوں میں کھوئے لاج وردی منظرو
کیا تمہارے پاس میری آنکھ کا حصہ نہیں

جو تمہارے قامت زیبا میں رچ کر شاد ہو
خوشبوؤں نے آج تک وہ پیرہن پہنا نہیں

دھوپ کی سرگوشیاں دیوار سے آکر لگیں
جو بھی آ بیٹھے اسے کہنا نہیں سایہ نہیں

سید اسد کاظمی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


مولانا زین العابدین خوئی:

السلام السلام مادر قم
خلق پر فیض عام مادر قم

اے خوشا کے میں خدا کے در پر ہوں
اپنے حاجت روا کے در پر ہوں

غم چشیدہ خوشی ہے بونٹوں پر
اشک دیدہ ہنسی ہے ہونٹوں پر

آنکھیں یوں کر رہی ہیں بات مری
ایک دجلہ تو ایک فرات مری

وقت وہ آئے آپ کے در پر
قت رک جائے آپ کے در پر

رزق کمیاب ہے سبیل حرم
نشہء ناب سلسبیل حرم

ہاں یہ اک مہرباں کا گنبد ہے
بے سہاروں کی ماں کا گنبد ہے

مولانا زین العابدین خوئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


جناب دانش بلتستانی:

تازہ کلام 

رہبر انقلاب زندہ باد 

رہبر دین ناب زندہ باد 
اے حسیں انتخاب زندہ باد 

تجھ سے روشن ہے دین کا چہرا 
اے رخ ماہتاب زندہ باد  

مسکراہٹ تری ہے برق تپاں 
دشمنوں پر عذاب زندہ باد 

نقش باطل پہ خط بطلاں ہے
بس ترا اک خطاب زندہ باد

اےخدا انقلاب مہدی تک 
رہبر انقلاب زندہ باد 

دل دانش بھی باغ باغ ہوا 
رحمتوں کا سحاب زندہ باد 

کاچو یوسف دانش بلتستانی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جناب عباس ثاقب:

تازہ غزل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نہ بات چیت نہ پہلے سا وہ لگاؤ دِکھے
نہ چاؤ بھاؤ نہ لہجے میں رکھ رکھاؤ دِکھے

کسی نے دشت میں شاید جلا دیا ہے چراغ
سبھی ہواؤں کا اس کی طرف جھکاؤ دِکھے

میں  جس جگہ بھی بناتا ہوں جھونپڑی اپنی
اسی طرف کسی سیلاب کا بہاؤ دِکھے

ہتھیلیوں کی لکیریں بھی بین کرتی ہیں
حنائی ہاتھ پہ غربت کا جب رچاؤ دِکھے

چلو کہ ہم بھی کہیں دور جا بسیں، ثاقبؔ!
کہ اس دیار میں ہر لمحہ چل چلاؤ دِکھے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔
[عباس ثاقبؔ]
 

لیبلز

تبصرہ ارسال

You are replying to: .
5 + 0 =