۲۹ شهریور ۱۴۰۰ |۱۲ صفر ۱۴۴۳ | Sep 20, 2021
استعارہ

حوزہ/بزم استعارہ، بزم استعارہ قم المقدسہ میں مقیم اردو زبان شعراء کی بزم ہے۔ اس بزم کو ہر ہفتے باقاعدگی سے ایک شعری نشست منعقد کرنے کا اعزاز حاصل ہے۔  اس ہفتے کی شعری و تنقیدی نشست کا اہتمام بزم کے معزز رکن اور خوبصورت  لب و لہجے کے شاعر جناب عباس ثاقب کے دولت کدہ پر کیا گیا۔

حوزہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق، بزم استعارہ قم المقدسہ میں مقیم اردو زبان شعراء کی بزم ہے۔ اس بزم کو ہر ہفتے باقاعدگی سے ایک شعری نشست منعقد کرنے کا اعزاز حاصل ہے۔  اس ہفتے کی شعری و تنقیدی نشست کا اہتمام بہ حسن اتفاق 13 رجب المرجب  کے با برکت  دن،جشن  مولود کعبہ کے عنوان سے بزم کے معزز رکن اور خوبصورت  لب و لہجے کے شاعر جناب عباس ثاقب کے دولت کدہ پر کیا گیا۔

شریک شعرائے کرام:

اس بزم میں شریک شعرا کے اسماء گرامی درج ذیل ہیں:

مولانا سید احتشام جونپوری
مولانا سید ضیغمؔ نقوی بارہ بنکوی
مولانا  سید شفیع حیدر رضوی 
مولانا سید عابد رضا رضوی
جناب احمد شہریار، جناب ابراہیم نوریؔ، 
جناب ممتاز عاطف،مولانا زین العابدین خوئی، جناب حیدر جعفری ،جناب ارشد سراغ ،جناب سید اسد کاظمی، دانش بلتستانی اورجناب عباس ثاقب۔

شعراء کرام کے منتخب اشعار:

مولانا سید احتشام جونپوری:

موت کی وادیوں  میں ہے خنداں نسیم زندگی
صدقہ اتارو جبرئیل پیکر محو خواب کا

ضرب علی کے زور سے عمر دو نیم کیوں نہ ہو
تیغ ہے کردگار کی وار ہے یہ شباب کا

مولانا سید احتشام حشم جونپوری
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


مولانا سید ضیغمؔ بارہ بنکوی:

کعبه میں آج اس کی ولادت کی ہے خوشی
جس کے قدم کو چومتی ہیں رفعتیں تمام
١٣ رجب کو جمعہ کے دن ٣٠ عام فیل
آیا ہے نور دور ہوئیں ظلمتیں تمام

ضیغم بارہ بنکوی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مولانا سید شفیع  حیدر رضوی:

مے گساروں کو کہاں حاصل  کسی ساغر میں تھا
وہ نشہ مے کا جو حسن  ساقی کوثر  میں تھا
پنجتن نے میرے حق میں داوری فرمائی ہے
فیصلہ حالانکہ دست داور محشر میں تھا

مولانا سید شفیع  حیدر رضوی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


جناب احمد شہریار:

یہ آئنہ ملے گا تجھے شش جہات میں
مولا کا عکس دیکھ خدا کی صفات میں
ذکرِ علی کے ساتھ نہیں کرتے ذکرِ غیر
ہم زہر گھولتے نہیں آبِ حیات میں! 

احمد شہریار
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


سید اسد کاظمی:
میں نے پہلے علیؑ کا نام لکھا 
اور پھر بار بار لکھا ہے
یہ کتابیں یہاں سے لے جاؤ 
ان پہ حق چار یار لکھا ہے

سید اسد کاظمی 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


جناب ابراہیم نوری:

قطعہ:

جو مجھ پہ چشم عطائے  خدا  نہیں ہوتی
زبان،مدحت  حیدر  میں  وا  نہیں  ہوتی 
نماز  عشق  علی وقت  پر  پڑھو  نوری 
یہ وہ نماز  ہے  جسکی  قضا  نہیں  ہوتی 

محمد ابراہیم نوری
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


جناب حیدر جعفری:
قطعہ:

جب ہو جنت کا تذکرہ کرنا
ذکر شبّیر و کربلا کرنا
منہ سے نکلے جو یا علی حیدر
اپنی ماں کے لیے دعا کرنا

جناب حیدر جعفری
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


جناب مولانا میرزا زین العابدین خوئی: 

قابلِ ذِکر کب تھا میں، ذاکرِ شہہؑ بنادیا !!
شکریہ مادرِ حسینؑ، آپؑ کے انتخاب کا
۔
مستِ شرابِ دید تھے میکدۂ نجف میں هم
کاش نہ ٹوٹتا خوئیؔ ، نشّہ ہمارے خواب کا

(میرزا زین العابدین خوئی)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جناب سید عابد رضا  رضوی:

جو معتقد نہیں ہے علی کے کمال کا 
اسکو ہمیشہ سامنا  ہوگا زوال کا 

دامن ابوتراب کا تھاما ہے اس لئے 
بس ایک راستہ ہے خدا سے وصال کا

سید عابد رضا رضوی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جناب ممتاز عاطف:
ہے لعاب سروری کا یہ اثر یا معجزہ
تین دن کی عمر میں قرآں سناتے ہیں علی ع

وارثِ علم نبی ص ہیں بر سرِ منبر تبھی
بیٹھ کر نعرہ سلونی کا لگاتے ہیں علی ع

ممتاز عاطف
۔۔۔۔۔۔۔

جناب کاچو یوسف دانش:

عشق علی کی آگ نے جھلسا کے رکھ دیا 
دل سے نکل گئیں ہیں مری نفرتیں تمام 

جنگ آزما تو مرحب و عنتر بھی تھے مگر 
نام علی سنا تو ہوئیں ہمتیں تمام

کاچو یوسف دانش
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جناب ارشد سراغ:
کر رہا ہے مصطفی کا رب ثنائے  مرتضی ع
سن رہا  ہوں  آسماں سے میں صدائے مرتضی ع
مجھ کو بھی من کنت مولا والا خطبہ یاد ہے
اور نہیں کوئی مرا مولا سوائے مرتضی ع

ارشد سراغ
۔۔۔۔۔۔۔۔

جناب  عباس ثاقب:
رباعی:

ہو جاتی ہیں زہراؑ کی نگاہیں حیران
اوقاتِ تلاوت میں کہاں جائے دھیان
ہے صحن میں اک سمت علیؑ کا چہرہ
اور ایک طرف رحل پہ رکھا قرآن

عباس ثاقب 

تبصرہ ارسال

You are replying to: .
2 + 0 =