۱ اردیبهشت ۱۴۰۳ |۱۱ شوال ۱۴۴۵ | Apr 20, 2024
آیت اللہ حافظ ریاض نجفی

حوزہ/ وفاق المدارس الشیعہ پاکستان کے صدر نے خطبہ جمعہ میں بیان کرتے ہوئے کہا: باطل ظاہری طور پر کتنا ہی طاقت ور اور حق کتنا ہی کمزور نظر آئے لیکن غلبہ اور فتح حق ہی کو حاصل ہو گی نیز کرپشن، ذخیرہ اندوزی، رشوت اور دیگر ناجائز ذرائع سے مال بنانے کا انجام ایک جیسا ہو گا۔

حوزہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق،لاہور/ وفاق المدارس الشیعہ پاکستان کے صدر آیت اللہ حافظ سید ریاض حسین نجفی نے جامعتہ المنتظر ، ایچ بلاک ماڈل ٹاون لاہور میں خطبہ جمعہ میں بیان کرتے ہوئے کہا ہے کہ اللہ تعالیٰ کائنات کی پیدائش سے بھی پہلے تھا،اُسی نے کائنات کی ہر شئے کو پیدا کیا۔فقط اُسی کی ذات ہی سب سے پہلے اورقدیم ہے۔اولیّت،اذلیّت،ابدیّت فقط ااُسی کے لئے ہے۔ جب کچھ بھی نہ تھا تواللہ تھا اور جب کچھ بھی نہ رہے گاتو اللہ رہے گا۔انبیاؑء، اولیاؑءسمیت سب نے موت کا ذائقہ چکھنا ہے۔ہر شئے نے فنا ہو جانا ہے۔مال و دولت کمانے کی اجازت ہے لیکن اس کے کمانے اور خرچ کرنے کا طریقہ اللہ تعالیٰ کے احکامات کے مطابق ہو۔مولائے کائنات علی ابن ابیطالب علیہ السلام نے سرمایہ داروں کو تنبیہ فرمائی کہ کمائے ہوئے مال سے وہی آپ کا ہے جو آپ کی ضروریات پوری کرے، باقی امانت ہے جس میں سے رشتہ داروں، اہلِ محلہ، ضرورتمندوں پر خرچ کرنا چاہئے۔آپؑ ہی کے ایک فرمان کا مفہوم ہے کہ مال و دولت ہو یا صحت،قوت،فراغت و فرصت،ان سب نعمتوں کو آخرت ٹھیک کرنے کے لئے استعمال کرنا چاہئے۔

انہوں نے کہا کہ معروف جملے ”تمام تعریفیں اللہ کے لئے ہیں “ کی ایک تفسیر یہ بھی کی جاتی ہے کہ کسی کی خوبی، صفت کی بھی اگر تعریف کی جائے تو وہ بھی درحقیقت اللہ کی تعریف ہے کیونکہ خوبیوں،صفات کا خالق بھی وہی ہے اور عطا کرنے والا بھی۔

ان کا کہنا تھا کہ اللہ تعالیٰ کی بے شمار نعمتوں میں سے رات اور دن کا تبدیل ہونا بھی ہے۔قرآن مجید میں اس کا تذکرہ ہے کہ اگر یہ رات ہمیشہ رہتی،شب کی تاریکی ختم ہی نہ ہوتی تو اللہ کے سوا کون ہے جو روشنی دیتا؟اِسی طرح اگر ہمیشہ دن ہی رہتااور آرام و نیند کے لئے رات کا پردہ نہ ہوتا تو کیا ہوتا؟یہ تمام نعمتیں اللہ تعالیٰ کی قدرت اور خالقیّت کی طرف متوجہ کرتی ہیں تاکہ انسان اپنے آپ کو آخرت کے لئیے تیار کر سکے جس دن اللہ کی عدالت میں سب کو پیش ہونا ہوگا اور یہاں کی عدالتوں کی طرح حاضر نہ ہونے کا کوئی بہانہ نہیں چلے گا۔

حافظ ریاض نجفی نے کہا کہ باطل ظاہری طور پر کتنا ہی طاقت ور اور حق کتنا ہی کمزور نظر آئے لیکن غلبہ اور فتح حق ہی کو حاصل ہو گی جیسا کہ حضرت موسیٰ اور فرعون کے قصہ سے ثابت ہوتا ہے۔فرعون اس قدر متکبر تھا کہ ہامان سے بلند و بالا بُرج، ٹاور بنانے کا کہا تاکہ اللہ کو دیکھ کر اس کا مقابلہ کرے، روس کے خروشیف نے بھی ایسی ہی بات کی تھی لیکن اللہ تعالیٰ نے حضرت موسیٰؑ کو فتح عطا فرمائی جنہوں نے پیدائش کے وقت سے ہی سختیاں دیکھنا شروع کیں۔قارون بھی آپ ؑ ہی کے دور میں تھا جس کے خزانے کے صندوق کئی لوگ اٹھاتے تھے۔ہر وہ شخص قارون ہے جوسرمایہ کی وجہ سے تکبّرکرتا ہے۔ کرپشن،ذخیرہ اندوزی،رشوت اور دیگرناجائز ذرائع سے مال بناتا ہے۔ان سب کا انجام ایک جیسا ہو گا۔

تبصرہ ارسال

You are replying to: .