۳۱ فروردین ۱۴۰۳ |۱۰ شوال ۱۴۴۵ | Apr 19, 2024
آیت اللہ حافظ ریاض نجفی

حوزہ/ وفاق المدار س الشیعہ پاکستان کے صدر نے خطبہ جمعہ میں بیان کرتے ہوئے کہا کہ اصل دین قرآن مجید یعنی اسلام ہے۔اسلام کے علاوہ کوئی بھی دین قبول نہیں کیا جائے گا۔

حوزہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق،لاہور/وفاق المدار س الشیعہ پاکستان کے صدر آیت اللہ حافظ سید ریاض حسین نجفی نے واضح کیا ہے کہ اصل دین قرآن مجید یعنی اسلام ہے۔اسلام کے علاوہ کوئی بھی دین قبول نہیں کیا جائے گا۔

انہوں نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہم نے قرآن کو اس لئے نازل فرمایا تاکہ لوگوں کو تاریکیوں سے نکال کر نور کی طرف لے جائے۔رسول اللہ اس دین و قرآن کے مفسر ، مبین اور شارح ہیں۔ اللہ کے رسول نے فرمایا : میں تمھارے درمیان دو گراں چیزیں چھوڑے جا رہا ہوں، ایک اللہ کی کتاب کہ جو ثقل اکبر ہے اور دوسری میری عترت اور اہل بیت ثقل اصغر ہیں ،جو ان سے تمسک کرے گا وہ کبھی بھی گمراہ نہیں ہو گا۔جس طرح اصل دین قرآن ہے اسی طرح اس رسول اللہ کی رسالت اورآئمہ ھدیٰ کی امامت بھی اصل دین ہے۔ لیکن انبیاءاور اولیاءالہٰی یہ سب اس قرآن کے مبلغ ، مفسر اور شارح ہیں۔اصل یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ نے جن کو ہادی بنا کر بھیجا ہے انہی کی ہدایت کے مطابق انسان کو زندگی گزارنی چاہیے۔

مزید بیان کرتے ہوئے کہا کہ اللہ تعالیٰ نے انبیائ، اولیاءاور آئمہ اہل بیت کو اپنا ہادی بنا کر بھیجا ہے۔ لہٰذا للہ تعالیٰ نے خود ان پانچوں مقدس اور معصوم ہستیوں کو مقتدا اور ہادی بنا کر بھیجا ہے۔ اگر ان کی خلاف ورزی ہوگی، یہ ہمارا دین نہیں ہوگا ، یہ اللہ کا دین نہیں ہو سکتا۔جو کوئی ان کی اطاعت کرے گا اور ان کے احکام پر عمل کرتے ہوئے حج، زکوٰة ا ور خمس کا پابند ہوگا وہ برائیوں سے محفوظ ہو جائے گا اور نیکیاں بجا لائے گا۔

جامع مسجد علی جامعة المنتظر میں خطبہ جمع دیتے ہوئے کہا کہ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے: جو ایک نیکی لائے تو اس کے لیے اس جیسی دس نیکیاں ہیں اور جو کوئی برائی لائے تو اسے صرف اتنا ہی بدلہ دیا جائے گا اور ان پر ظلم نہیں کیاجائے گا۔ اگر انسان بغیر خلوص کے بھی نیکی کرتا ہے اللہ سبحانہ و تعالیٰ اسے ایک کے بدلے دس نیکیاں عطا کرتا ہے اور اگر وہ خلوص کے ساتھ نیکی انجام دیتا ہے تو اللہ تعالی ٰ اسے اس کے خلوص کی وجہ سے ہزاروں بلکہ لاکھوں تک نیکیاں عطا کرتا ہے۔لیکن اگر وہ غلطی کرتا ہے تو اسے اس کے مطابق سزا ملے گی۔۔جاری کردہ: مولانا انیس الحسنین خان ۔۔۔۔۔ سیکرٹری نشرو اشاعت ۔۔

تبصرہ ارسال

You are replying to: .