۲ مرداد ۱۴۰۳ |۱۶ محرم ۱۴۴۶ | Jul 23, 2024
آر ایس ایس

حوزہ,آر ایس ایس نے مسلمانوں کا اعتماد حاصل کرنے کے لیے ایک نیا ٹریک پکڑا ہے۔ گزشتہ دنوں آر ایس ایس کے سربراہ موہن بھاگوت کا مدرسہ پہنچنا اور مسلم راشٹریہ منچ کے قومی کنوینر اندریش کمار کا درگاہ میں چراغ روشن کرنا اسی کوشش کی ایک کڑی سمجھی جاتی ہے۔

حوزہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق،سنہ 2024 کے عام انتخابات سے پہلے، آر ایس ایس نے مسلمانوں کا اعتماد حاصل کرنے کے لیے ایک نیا ٹریک پکڑا ہے۔ گزشتہ دنوں آر ایس ایس کے سربراہ موہن بھاگوت کا مدرسہ پہنچنا اور مسلم راشٹریہ منچ کے قومی کنوینر اندریش کمار کا درگاہ میں چراغ روشن کرنا اسی کوشش کی ایک کڑی سمجھی جاتی ہے۔ اندریش کمار گزشتہ تین سالوں سے دھنترس کے موقع پر درگاہ میں چراغ جلا رہے ہیں۔ لیکن اس مرتبہ یہ سلسلہ باقی ریاستوں تک بھی پہنچے گا۔

مانا جا رہا ہے کہ آر ایس ایس کی مہم خاص طور پر ان ریاستوں میں ہوگی جہاں اسمبلی انتخابات قریب ہیں۔ ممکن ہے کہ آنے والے وقت میں راشٹریہ سویم سیوک سنگھ چھتیس گڑھ سمیت مدھیہ پردیش میں درگاہ پر چراغاں کرے گی۔

یہ محض اتفاق نہیں ہے کہ آر ایس ایس کے سربراہ موہن بھاگوت کے پہلی بار مدرسہ پہنچنے کے ایک ماہ بعد ہی آر ایس ایس کی اپنی شاخ مسلم راشٹریہ منچ کے قومی کنوینر اندریش کمار حضرت نظام الدین اولیاء کی درگاہ پہنچے۔ حالانکہ یہ ان کا تیسرا سال ہے، جب وہ درگاہ پر چراغاں کرنے آئے تھے۔ حضرت نظام الدین کے 719ویں عرس کے موقع پر صرف 719 چراغ روشن کیے گئے۔ اس کے ساتھ ہی مسلم نیشنل فورم کی جانب سے ملک کی تقریباً 75 درگاہیں تھیں جنہیں دیوالی کے موقع پر دیاؤں سے روشن کیا گیا تھا۔

مسلم نیشنل فورم مسلمانوں کی عبادت گاہوں کے ذریعے اس پورے طبقے تک پہنچنے کی کوشش کر رہا ہے۔ دارالحکومت دہلی سے شروع ہونے والا یہ عمل باقی ریاستوں میں بھی پہنچے گا۔ مسلم راشٹریہ منچ کے قومی میڈیا انچارج شاہد سعید کا کہنا ہے کہ یہ مسلم راشٹریہ منچ کی کوشش ہے کہ ہندو مسلم ہم آہنگی کو مزید مضبوط کیا جائے۔ دیوالی، ہندوؤں کا تہوار اور جب اس تہوار پر درگاہیں بھی روشن ہوں گی، تو امن کی ایک نئی تصویر بنے گی۔ آر ایس ایس کے سربراہ موہن بھاگوت سے لے کر رام لال تک سبھی نے اس کڑی میں پہل کی ہے۔ اور اب اسے دوسری ریاستوں تک بھی بڑھایا جائے گا۔ شاہد سعید نے بتایا کہ مسلم نیشنل فورم اب ملک کی دیگر ریاستوں میں تیز رفتاری سے بھائی چارہ بڑھانے کے لیے اس طرح کی تقریبات کا انعقاد کرے گا۔

اب آر ایس ایس نے بھائی چارے کا پیغام دیتے ہوئے مسلم طبقے کی عبادت گاہوں تک پہنچنا شروع کر دیا ہے۔ جس طرح اس طبقے کو ترجیح دی گئی ہے، اس سے ممکن ہے کہ مدھیہ پردیش کے انتخابات تک اس طبقے کی نمائندگی کے حوالے سے تصویر بدل جائے۔ ورنہ 2018 کے اسمبلی انتخابات کو ہال مارک کہا جا سکتا ہے۔ جب تقریباً 40 لاکھ مسلم ووٹر ہونے کے باوجود بی جے پی کی طرف سے صرف ایک مسلم امیدوار اور کانگریس کی طرف سے صرف تین مسلم امیدوار میدان میں تھے۔ یہی وجہ تھی کہ ووٹروں کی تعداد کے حساب سے اس طبقے کو اسمبلی میں نمائندوں کی تعداد میں اضافہ نہیں مل سکا۔ بھوپال کی شمالی اور وسطی اسمبلی سیٹوں کے علاوہ ریاست کی 230 سیٹوں میں سے بھوپال، مدھیہ نریلا اور نارتھ سمیت دو درجن سے زیادہ ایسی اسمبلی سیٹیں ہیں، جہاں مسلم ووٹر فیصلہ کن کردار میں نظر آتے ہیں۔

لیبلز

تبصرہ ارسال

You are replying to: .