۱۰ اسفند ۱۳۹۹ | Feb 28, 2021
ابراہیم نوری

حوزہ نیوز ایجنسی |

از قلم: محمد ابراہیم نوری

لہو میں لت پت ہے پھر سے  
میرے وطن کا دامن
میرے وطن کے
ستم رسیدہ، شریف شہری
غضب کی سردی میں۔۔
مائیں، بہنیں،جوان،بوڑھے سبھی 
خلاف ستم دوبارہ
سر خیاباں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

گھروں سے باہر نکل نکل کر
۔سسک سسک کر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بلک بلک کر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تڑپ تڑپ کر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خود اپنے شانوں پہ کوہ ددر و الم اٹھائے 
بحال فریاد محو ماتم ہیں 
کچھ دنوں سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ اپنے بھائی کو رو رہے ہیں
کچھ اپنے بیٹوں کو رو رہے ہیں
کچھ اپنے بابا کو رو رہے ہیں

بحال گریہ یہ کہہ رہے ہیں:
ہیں ہم بھی باسی اسی وطن کے
تو پھر ہماری ہی جان آخر 
یہاں پہ محفوظ کیوں نہیں ہے؟
سوال حاکم سے کر رہے ہیں؛ 
ہمارے پیاروں کا کس خطا میں
 لہو بہایا گیا دوبارہ؟؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پہ سرد مہرئ حاکمان وطن تو دیکھو
بجائے اظہار تعزیت بس جواب آیا 
یہ ایک  مردہ ضمیر حاکم کا کہ
یہ دھرنا
یہ رونا دھونا
بلیک میلنگ کا ہے بہانہ

یہ مردہ حاکم مزید بولا:
کہ مت بنو تم بلیک میلر
کہ مت بنو تم بلیک میلر


 

لیبلز

تبصرہ ارسال

You are replying to: .
3 + 10 =