۲ اردیبهشت ۱۴۰۳ |۱۲ شوال ۱۴۴۵ | Apr 21, 2024
ندیم سرسوی

حوزہ|جس نے امکان کے ہاتھوں میں دیا عطر وجود،اس کی خوشبو سے بدن تیرا بھی تر ہے دیوار

حوزہ نیوز ایجنسی|

کعبہ بےچین ہے اور خاک بہ سر ہے دیوار
بس علی ع کے لیے منت کشِ در ہے دیوار

احدیت کا ہے جھومر ، ترے ماتھے کا نشاں
نور بکھرا ترا تا حدِ نظر ہے دیوار

عام رستے سے بھلا داخلِ کعبہ کیوں ہو !!؟
ترے آگے ابو طالب ع کا پسر ہے دیوار

کوششیں لاکھ چھپانے کی کریں اہلِ عناد
اس نشاں کے لیے خود سینہ سپر ہے دیوار

دامنِ شق ترا تکتا ہوں بڑی حیرت سے !
جیسے یہ معجزۂ شقِ قمر ہے دیوار

جب سے اترا ہے لبِ صحنِ حرم ماہِ رجب
تزکرہ تیرا ہی بس شام و سحر ہے دیوار

دل کشی پر تری ہوتے ہیں سماوات نثار !
تیرا یہ ایک نشاں رشکِ قمر ہے دیوار

وارث لمحہء کن ، آیا ہے نزدیک حرم
جھوم کے سجدے میں گر ، وقت سحر ہے دیوار

جس نے امکان کے ہاتھوں میں دیا عطر وجود
اس کی خوشبو سے بدن تیرا بھی تر ہے دیوار

ندیم سرسوی

تبصرہ ارسال

You are replying to: .