۸ خرداد ۱۴۰۳ |۲۰ ذیقعدهٔ ۱۴۴۵ | May 28, 2024
انہدم جنت البقیع کے اسباب

حوزہ/ یوم انہدام جنت البقیع کی مناسبت سے عینی رضوی ہندی کے اشعار پیشِ خدمت ہیں۔

حوزہ نیوز ایجنسی !

از قلم: عینی رضوی ہندی

ہر اک بار مجھ سے یہ دل پوچھتا ہے
مری شاہزادی کی تربت کہاں ہے
کوئی تو بتاو کہ دل رو رہا ہے
مری شاہزادی کی ۔۔۔۔

کہاں جاکے ڈھونڈھوں کہاں جاکے رووں
کہا جاکے چہرے کو اشکوں سے دھووں
کلیجے سے میرے دھواں اٹھ رہا ہے
مری شاہزادی۔۔۔۔۔

مدینے کی گلیوں سے کوچوں سے پوچھا
کبھی سبز گنبد کے گوشوں سے پوچھا
وہ پہلو پہ دروازہ جسکے گرا ہے
مری شاہزادی۔۔۔۔۔

مظالم پہ امت کے جو رو رہی ہے
محمد کی بیٹی کہاں سو رہی ہے
بتاو مسلمانوں تمکو پتہ ہے ؟۔۔۔
مری شاہزادی۔۔۔۔۔۔

بقیع میں ڈھونڈھا حرم میں بھی ڈھونڈھا
کبھی جاکے بیت الشرف میں بھی ڈھونڈھا
مگر اک نشاں بھی نہ مجھکو ملا ہے
مری شاہزادی۔۔۔۔۔

مدینے کی اے خاک تو ہی بتا دے
ہر اک راز سے آج پردہ اٹھا دے
ستم کیا زمانے نے اس پر کیا ہے
مری شاہزادی ۔۔۔۔۔

پیمبر کی بیٹی کو تو جانتی ہے
کہ خاتون جنت کو پہچانتی ہے
جسے جسم کا اپنے ٹکڑا کہا ہے
مری شاہزادی۔۔۔۔

بتاو مسلمانوں کیا دوریاں تھیں
کیا آل محمد کی مجبوریاں تھیں
کیوں آخر جنازہ یہ شب میں اٹھا ہے۔۔۔
مری شاہزادی۔۔۔۔

دعا ہے یہ عینی امام زماں سے
یہ عامر بھی قدموں پہ سر رکھ کے پوچھے
وہ ہاتھوں میں جسکے ابھی تک عصا ہے۔۔۔۔
مری شاہزادی کی۔۔۔۔۔

تبصرہ ارسال

You are replying to: .