۱۵ مهر ۱۴۰۱ |۱۱ ربیع‌الاول ۱۴۴۴ | Oct 7, 2022
گلگت

حوزہ/سویلین ہونے کی وجہ سے ان پر فوجی عدالت میں مقدمہ نہیں چلایا جا سکتا۔ جب کہ فوجی عدالتوں نے ملزمان کو مجرم قرار دے کر جیل بھیج دیا۔ شیعہ برادری نے اس کے بعد سے احتجاج کیا، اور دعویٰ کیا کہ 13 افراد کے خلاف جعلی عدالتوں اور جھوٹے الزامات کے ذریعے مقدمہ چلایا گیا۔

حوزہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق/ اسلام آباد: پاکستان میں اقلیتی برادری کے حقوق کی پامالی کے واقعات اکثر منظر عام پر آتے رہتے ہیں۔ جس کی وجہ سے وہ اپنے حقوق کے لیے لڑتے بھی نظر آتے ہیں۔ پاکستان کے گلگت بلتستان میں شیعہ برادری اپنے 13 افراد کی رہائی کے لیے ایک ہفتے سے زائد عرصے سے احتجاج کر رہی ہے۔ یہاں کئی مقامات پر اس طرح کے مظاہرے ہو رہے ہیں۔ لیکن اس کے باوجود ان کی کہیں سنوائی نہیں ہو رہی۔ درحقیقت، یہاں 13 افراد کو 2005 میں فوجی عدالتوں نے رینجرز اور کمیونٹی کے درمیان جھڑپوں میں ملوث ہونے کے بعد حراست میں لیا تھا۔

یہ احتجاج 13 اکتوبر 2005 کے ایک واقعے سے منسلک ہے، جہاں رینجرز اہلکاروں نے شیعہ برادری کے افراد پر فائرنگ کی تھی، جس کے نتیجے میں خواتین اور بچوں سمیت تقریباً 12 شہری ہلاک ہوئے تھے۔ رینجرز اور شیعہ برادری کے درمیان ہونے والے تصادم میں مبینہ طور پر دو رینجرز اہلکار بھی گولی لگنے سے ہلاک ہو گئے، جس کے نتیجے میں فائرنگ کے پیچھے مشتبہ 13 افراد کے خلاف مقدمہ درج کر لیا گیا۔

ایکسپریس ٹریبیون نے رپورٹ کیا کہ فائرنگ کے تبادلے میں کم از کم دو رینجرز اور 10 شہری مارے گئے۔ اس سال کے شروع میں مسلح افراد کے ہاتھوں ممتاز شیعہ علما کے قتل کے بعد شروع ہونے والے تشدد میں چار رینجرز اہلکار زخمی بھی ہوئے تھے۔

2015 میں مقدمہ فوجی عدالت میں منتقل کر دیا گیا۔ ملزمان جن میں ممتاز کاوش، شبیر رضوی، زاہد حسین، صفدر علی، مجاہد علی، علی حیدر، جمیل حسین، علی رحمت، غلام عباس اور بلال حسین شامل ہیں، اس وقت ضمانت پر باہر تھے۔

سویلین ہونے کی وجہ سے ان پر فوجی عدالت میں مقدمہ نہیں چلایا جا سکتا۔ جب کہ فوجی عدالتوں نے ملزمان کو مجرم قرار دے کر جیل بھیج دیا۔ شیعہ برادری نے اس کے بعد سے احتجاج کیا، اور دعویٰ کیا کہ 13 افراد کے خلاف جعلی عدالتوں اور جھوٹے الزامات کے ذریعے مقدمہ چلایا گیا۔ احتجاج کرنے والی شیعہ برادری کا مطالبہ تھا کہ شہری ہونے کی وجہ سے ان پر فوجی عدالتوں میں مقدمہ نہیں چلایا جانا چاہیے تھا۔

لیبلز

تبصرہ ارسال

You are replying to: .
3 + 0 =