۱۵ مهر ۱۴۰۱ |۱۱ ربیع‌الاول ۱۴۴۴ | Oct 7, 2022
آسٹریلیا

حوزہ/آسٹریلیا میں پہلی بار ملک میں اپنی شناخت مسیحی کے طور پر کرانے والوں کی تعداد 50 فیصد سے بھی کم ہو گئی ہے۔ آسٹریلیا بیورو آف سٹیٹسٹکس (ABS) کے مطابق، اب آسٹریلیا میں صرف 44 فیصد عیسائی رہ گئے ہیں۔

حوزہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق،آسٹریلیا میں مردم شماری کا نیا ڈیٹا پبلک کر دیا گیا ہے۔ ان اعداد و شمار میں کئی چونکا دینے والی معلومات سامنے آئی ہیں۔ ہندو مذہب اور وہاں رہنے والے ہندوستانیوں کی حالت کے بارے میں بھی بہت سی معلومات سامنے آئی ہیں۔ اعداد و شمار کے مطابق آسٹریلیا میں ہندو مذہب اور اسلام تیزی سے بڑھ رہے ہیں۔ آسٹریلیا میں ہر پانچ سال بعد مردم شماری ہوتی ہے، جس کے اعداد و شمار گزشتہ ہفتے جاری کیے گئے تھے۔

نئی مردم شماری کے مطابق آسٹریلیا کی آبادی ڈھائی کروڑ سے تجاوز کر گئی ہے۔ وہاں کی آبادی اب دو کروڑ 55 لاکھ ہو گئی ہے جو 2016 میں 2 کروڑ 34 لاکھ تھی۔ یعنی پچھلے پانچ سالوں میں آبادی میں 21 لاکھ کا اضافہ ہوا ہے۔ ساتھ ہی ملک کی اوسط آمدنی میں بھی قدرے اضافہ ہوا ہے۔ مردم شماری کے اعداد و شمار ان رجحانات کو بھی ظاہر کرتے ہیں جو آنے والے وقتوں میں ملک کی تشکیل میں مدد کریں گے۔

آسٹریلیا میں پہلی بار ملک میں اپنی شناخت مسیحی کے طور پر کرانے والوں کی تعداد 50 فیصد سے بھی کم ہو گئی ہے۔ آسٹریلیا بیورو آف سٹیٹسٹکس (ABS) کے مطابق، اب آسٹریلیا میں صرف 44 فیصد عیسائی رہ گئے ہیں۔ اسی وقت، تقریباً 50 سال پہلے، عیسائیوں کی آبادی تقریباً 90 فیصد تھی۔ اگرچہ ملک میں عیسائیت کو ماننے والوں کی تعداد اب بھی سب سے زیادہ ہے لیکن اس کے بعد کسی بھی مذہب کو نہ ماننے والوں کی تعداد دوسرے نمبر پر ہے۔

ملک میں کسی بھی مذہب کو نہ ماننے والوں کی تعداد اب بڑھ کر 39 فیصد ہو گئی ہے اور اس طرح ’کوئی مذہب نہیں‘ رکھنے والوں کی تعداد میں 9 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ ہندومت اور اسلام اب آسٹریلیا کے سب سے تیزی سے بڑھنے والے مذاہب ہیں۔ حالانکہ ان دونوں مذاہب کے ماننے والوں کی تعداد صرف 3-3 فیصد ہے۔ لیکن پچھلی مردم شماری سے موازنہ کرنے سے معلوم ہوتا ہے کہ دونوں مذاہب کے لوگوں کی تعداد بڑھ رہی ہے۔

آسٹریلیا اب پہلے سے کہیں زیادہ متنوع ہوتا جا رہا ہے۔ جدید آسٹریلیا امیگریشن سے بنا ہے۔ تاہم یہ تاریخ میں پہلی بار ہوا ہے کہ ملک کی نصف سے زیادہ آبادی یا تو بیرون ملک پیدا ہوئی ہے یا ان کے والدین بیرون ملک پیدا ہوئے ہیں۔ کورونا وبا کے دوران امیگریشن کی شرح میں کمی آئی لیکن گزشتہ 5 سالوں کے دوران دیگر ممالک سے 10 لاکھ سے زائد افراد ملک میں آچکے ہیں۔ ان میں سے ایک چوتھائی لوگ ہندوستان سے وہاں پہنچے ہیں۔

نئی آبادی میں وہاں کے رہنے والے لوگ جو دوسرے ملک میں پیدا ہوئے، ہندوستان کے لوگوں نے چین اور نیوزی لینڈ کو پیچھے چھوڑ دیا ہے۔ ہندوستان وہاں تیسرے نمبر پر ہے۔ آسٹریلیا میں اس وقت سب سے زیادہ وہ لوگ ہیں جو آسٹریلیا میں پیدا ہوئے تھے، اس کے بعد وہ لوگ ہیں جو انگلینڈ میں پیدا ہوئے تھے۔ ان دونوں ممالک کے بعد تیسرا نمبر ان لوگوں کا ہے جو ہندوستان میں پیدا ہوئے۔ آسٹریلیا میں 20% سے زیادہ لوگ اپنے گھروں میں انگریزی کے علاوہ کوئی اور زبان بولتے ہیں۔ 2016 سے اب تک ایسے لوگوں کی تعداد میں تقریباً 8 لاکھ کا اضافہ ہوا ہے۔ انگریزی کے علاوہ بولی جانے والی زبانوں میں سب سے زیادہ مقبول چینی یا عربی ہے۔

تبصرہ ارسال

You are replying to: .
5 + 1 =