۳ اردیبهشت ۱۴۰۳ |۱۳ شوال ۱۴۴۵ | Apr 22, 2024
امام حسن عسکری

حوزہ/ حضرت امام حسن عسکری علیہ السلام کی عمر بہت مختصر ہے، صرف اٹھائیس برس مگر اس محدود اور مشکلات سے بھری ہوئی زندگی میں بھی آپ کے علمی فیوض کے دریا، سیاسی بصیرت اور اخلاقی دروس سے بڑے بڑے بلند پایہ کو سیراب ہونے کا موقع  دیا۔ تبلیغ دین اور اسلام و انسانیت کا فروغ ان کا مقصد زیست ہوتا رہا۔

تحریر: ڈاکٹر شجاعت حسین

حوزہ نیوز ایجنسی | حضرت امام حسن عسکری علیہ السلام پیغمبر اسلام، تاجدار انبیاء حضرت محمد مصطفٰی ﷺ کے گیارہویں چشم چراغ و جانشین اور سلسلۂ عصمت کی تیرہویں کڑی ہیں۔ آپ کے والدٍ ماجد حضرت امام علی نقی علیہ السلام ہیں۔ آپ بھی اپنے آباؤ اجداد کی طرح اعلمٍ زمانہ اور افضل کائنات تھے۔ (شیخ مفید، ارشاد، صفحہ 502)؛ علامہ محمد بن طلحہ شافعی کا بیان ہے کہ آپؑ کا ایک اہم شرف یہ بھی ہے کہ امام مہدی علیہ السلام آپؑ ہی کے اکلوتے فرزند ہیں جنہیں پروردگار عالم نے طویل عمر عطا کی اور جن کا جب ظہور ہوگا تب وہ دنیا میں عدل و انصاف قائم کریں گے (مطالب السؤل، صفحہ 292)۔

آج پوری دنیا میں حضرت امام حسن عسکری علیہ السلام کی قمری کیلنڈر کے مطابق 1285 ویں اور انگریزی کیلنڈر کے مطابق 1249 ویں یومٍ شہادت منائی جارہی ہے۔ ہر ملک، ہر شر، ہر امام بارگاہ، ہر عزاخانہ، اور ہر گھر میں سوز خوانی، مرثیہ خوانی، نوحہ خوانی اور مجلس برپا ہو رہے ہیں۔ 8 ربیع الاوّل 260 ہجری میں آپ نے شہادت پائی اور اپنے پدر بزرگوار کی روضۂ اقدس کے قریب سامرا میں دفن ہوئے جہاں آپؑ کا روضۂ مبارک آج بھی زیارت گاہٍ خلائق بنا ہوا ہے۔

عزاداران امام حسن عسکریؑ آشنا ہیں کہ خالق کائنات اپنے نمائندوں کو نورٍ علم و صداقت سے نوازتا ہے۔ اسی طرح ہر امام اپنے دور کا علمی مرکز اور مرجع ہوتا ہے۔ اسی لیے آج بھی مکتب اہلبیت علیہم السلام دیگر مکاتب فکر سے نمایاں حیثیت رکھتا ہے۔ علوم دورٍ حاضر ہوں یا گزشتہ کے، آپ دیکھیں چاہے وہ علوم جدید سائنس، ٹیکنالوجی، ریاضیات، فلکیات، طب و حکمت، علم کلام و فلسفہ، تفسیر و علم حدیث وغیرہ تمام علوم میں سب سے ممتاز نظر آتا ہے۔ در حقیقت مکتب اہلبیتؑ کی بقا، قوت کشش اور دوام کی وجہ علمی بنیادوں پر مبنی ہے۔ اس مکتب کی نورانیت علم ہی ہے۔

اگر ہم تاریخ کا مطالعہ کریں تو دیکھیں گے کہ آئمہ اطہار علیہم السلام کے چاہنے اور ماننے والوں نے چراغ علم کو روشن رکھنے کے لیے ہر دور میں یعنی ظالم حکمرانوں کے باوجود علم کو فروغ دینا اور آئندہ نسلوں کے لیے اپنی تخلیقات میں علم کو قید کر دیا ان میں یہ سبھی اسم گرامی فہرست کی زینت ہیں: محمد الشریف الرضی، شیخ مفید، شیخ صدوق، شیخ طوسی، شیخ طوسی، علامہ محقق حلی، علامہ مجلسی، شیخ کلینی، علامہ امینی، ابوالقاسم خوئ، لفط اللہ صفی گلپائگانی، تقی بحجت، فاضل لنکرانی، عبد العزیز الحکیم، محمد بہشتی، محمدحسین طبا طبائ، حسین بروجردی، شہید مطہری، رہبر کبیر امام خمینی، رہبر معظم آیتہ اللہ سید علی خامنہ ای، اور آیتہ اللہ العظمٰی سید حسینی سیستانی۔

امام حسن عسکریؑ نے اسلامی اصول و قوانین اور الٰہی علوم کی سربلندی و سرفرازی کے لیے ہر دم کوشاں رہے اور علمی چراغ روشن کیئے۔ علماء کرام، محدثین، اور محققین کی متفقہ رائے ہے کہ اٹھارہ ہزار تشنگانٍ علم نے امام کے حضور میں زانو ادب تہہ کیا اور علم سے فیضیاب ہوئے۔ آج بھی علماء اور فقہا علوم آل محمد ﷺ کی پاسبانی اور تالیف اور تدوین میں مشغول ہیں جیسا کہ مندرجہ بالا پیراگراف میں راقم الحروف نے قارئین کرام کے لیے تحریر کی ہے۔ شیعوں میں علوم الٰہی کو رائج کرکے ان میں علم، حکمت، عقل و شعور کے ذریعے افضلیت حاصل کروانا مقصد مقصود ہے۔ امام حسن عسکریؑ کی پوری توجہ علم و معرفت کی اشاعت، اسلامی فکر و نظریات کو مستحکم کرنا تھی۔ ہم امام کی فکر پر کتنا عملٍ پیراں ہیں، محاسبہ پر تدقیق کی ضرورت ہے۔

امام حسن عسکری علیہ السلام نے اسلام کے سیاسی نظام میں حصہ لیا۔ سیاسی نظام میں حصہ لینے کی وجہ طاغوتی نظامٍ حکومت کا مقابلہ کر کے ظالموں کے ظلم کی مخالفت اور مظلوموں کی نصرت کر سکیں اور اس کی استبدادی حکومت اور ظالم حکمرانوں کو اسلامی اقتدار کا مذاق اڑانے سے روکا جا سکے۔ انسانیت کی دفاع اور ظالم حکمران سے مقابلہ اور ان مقاصد کے حصول کے لیے سخت ترین حالات کا سامنا کیا۔ اس کے لیے آپؑ کئی دفعہ جیل گئے۔ کئی مرتبہ آپؑ کے قتل کی شازشیں رچی گئیں۔ آپؑ کو شہر کے ایک قید خانے سے دوسرے قید خانے میں منتقل کیا گیا۔ عباسی خلفا کا ایسا اقدام اس لیے تھا تاکہ امامؑ کے چاہنے والوں سے جدا کر کے عوامی طاقت سے امامؑ کو محروم رکھا جا سکے۔ عباسی حکومت امامؑ کی سیاسی اور فکری کوششوں کو ناکام کرنا چاہتی تھی۔

سیاسی بصیرت کا واقعہ قابل ذکر ہے کہ جعفر حلبی کا بیان ہے کہ ہم کچھ لوگ محلہ عسکری میں امام کا انتظار کر رہے تھے کہ اتنے میں امام کی جانب سے ایک نوشتہ آیا جو آپ کا خط، خود دست مبارک سے تحریر شدہ تھا۔ خبردار تم میں سے کوئی بھی مجھے سلام نہ کرے اور نہ ہی مجھے کوئی اشارہ کرے کیونکہ تمھاری زندگی محفوظ نہیں رہے گی۔ آپ غور کریں کہ اس واقعہ سے ظار ہوتا ہے کہ ظالم حکام کی جاسوسی کا نظام کتنا چاک و چو بند تھا۔ تھوڑی سی غفلت قتل کا سبب بن جاتی۔ یہاں تک کہ اظہار محبت کرنا جرم تھا۔

امام حسن عسکری علیہ السلام کی سیاسی بصیرت اور تعلیم کے لیے یہ بھی واقعہ مفید ذکر ہے۔ ابو ہاشم جعفری، داؤد بن اسود سے نقل ہے۔ ایک دن حضرت امام حسن عسکری نے مجھے بلایا۔ مجھے ایک گول سی لکڑی دی۔ آپ نے فرمایا عمری کے پاس لے جاؤ۔ راستے میں مجھے ایک خچر سوار شقا ملا اور اس نے میرا راستہ روکا تو راستے کو صاف کرنے کے لیے خچر کو مارا، لکڑی ٹوٹ گئی، لکڑی کے اندر کچھ خطوط تھے۔ جلدی سے ٹوٹی ہوئی لکڑی کو آستین میں چھپا لیا اور چل پڑا۔ منزل مقصود تک پہنچا تو عیسیٰ نے میرا استقبال کیا اور کہنے لگا امام نے پوچھا ہے تم نے خچر کو کیوں مارا تھا جس کی وجہ سے لکڑی ٹوٹ گئی؟ میں نے کہا چونکہ میرے علم میں نہیں تھا کہ اس لکڑی کے اندر کوئی چیز ہے۔ امام نے فرمایا آخر ایسا کام کیوں کرتے ہو جس کی وجہ سے عذر خواہی کرنا پڑے۔ دوبارہ ایسی غلطی مت کرنا یاد رکھو! جب بھی تمھیں کوئی بُڑا بھلا کہے تو اس کی پروا نہ کرنا اور اپنے کام سے کام رکھو کیونکہ تمھیں معلوم ہے کہ ہمارے لیے حالات سازگار نہیں ہیں۔ لہٰذا اپنے کام کو بڑی ہوشیاری اور ظرافت سے انجام دو۔ تمھارے متعلق ہمیں سب باتیں معلوم ہو جاتی ہیں۔

اس واقعہ سے ظاہر ہوتا ہے کہ امام کی منظم سیاسی مہم تھی کہ جس کے ذریعے لوگوں کے فکر و شعور کو بیدار اور حکام کے خفیہ مظالم کی نقاب کشائی کی جا سکے۔ علاوہ ازیں امام نے حساس ذمہ داری کا درس دیا اور فرمایا مقدس اہداف کے سلسلے میں لوگوں کی چہ میگوئیاں اور نکتہ چینیوں کی طرف متوجہ نہ ہوں اور دلبرداشتہ نہ ہوں بلکہ الٰہی مشن کی تگ و دو کے لیے مصروف عمل رہیں۔ امام حسن عسکری علیہ السلام نے فرمایا چونکہ زمانے کے طاغوت تمھارے اذہان کو منتشر کرنے کے لیے طرح طرح کے منصوبے بناتے ہیں تاکہ پرواز فکر منجمد ہو اور انہیں الجھا کے رکھ دو کہ انہیں صحیح صورت حال کی آگاہی نہ ہو سکے۔ لوگوں کی گفتگو پر توجہ نہ دو۔ عبرت یہ ہے کہ فریضہ کی انجام دہی اور احساس ذمہ داری کس قدر اہم ہے۔ امام نے یہ بھی تاکید فرمائی کہ اپنی زندگی میں اپنے افعال و کردار پر کڑی نظر رکھو۔ جو کام کرنا ہو غور و فکر کر انجام دو۔ فکر و شعور سے کرنا۔ ایک انسان کامل کی مانند زندگی بسر کرو۔ اپنی پوری قوت کے ساتھ مقابلہ کرو۔ اپنے ماننے والوں کو مکمل حوصلہ دیکر نہایت صبر و استقامت کے ساتھ اپنے مقدس اہداف کی جانب گامزن رہو۔ سیاست دیانتداری سے کرو۔

امام خمینی نے سیاسی بصیرت سے ایران میں انقلاب برپا کیا اور شاہ پہلوی کی ظالم حکومت کو اُکھار پھیکا۔ جب جاپان کا وزیر اعظم امریکہ کے صدر، ڈونالڈ ٹرمپ کے خط کے ہمراہ امام خامنہ ای کے پاس آیا اور وہ خط دینا چاہا تو رہبر معظم نے تاریخی بات کہی کہ وہ اس لائق نہیں کہ اس کا خط لیا جائے۔ آیتہ اللہ سید الحسینی سیستانی نے شیعہ اور سنی کو متحد کر دہشت گرد، دائش کو عراق سے مار بھگایا اور سید حسن نصراللہ کی سیاسی بصیرت انتہا کو ہے کہ اسرائیل کو شکست دینے کے ساتھ ساتھ اپنی خوف کے سائے میں رکھے ہوئے ہیں۔

باوجود یہ کہ حضرت امام حسن عسکری علیہ السلام کی عمر بہت مختصر ہے، صرف اٹھائیس برس مگر اس محدود اور مشکلات سے بھری ہوئی زندگی میں بھی آپ کے علمی فیوض کے دریا، سیاسی بصیرت اور اخلاقی دروس سے بڑے بڑے بلند پایہ کو سیراب ہونے کا موقع دیا۔ تبلیغ دین اور اسلام و انسانیت کا فروغ ان کا مقصد زیست ہوتا رہا۔ ان کا بڑھتا ہوا روحانی فیض اور علمی برکت لوگوں کو اپنا گرویدہ بنا لیا۔ حق و صداقت اور عدل و انصاف ان کا خوگر تھا۔ یہی وجہ ہے کہ عباسی حکمرانوں کو آپ کی شخصیت ناقابل ُبرداشت ہو گئی۔ آپ کو زہر دیا گیا جو آپ کی شہادت کی وجہ بنی۔ حضرت حسن عسکری علیہ السلام کی شہادت میں یہی چیز کار فرما تھی. معتمد باللہ عباسی خلیفہ کے بھجوائے ہوئے زہر سے 8 ربیع الاوّل 260ھ میں آپ نے شہادت پائی اور اپنے پدر بزرگوار کی قبر مطہر کے پاس سامرا میں دفن ہوئے جہاں حضرت حسن عسکری کا روضۂ مبارک آج بھی زیارت گاہ خلائق بنا ہوا ہے۔


لیبلز

تبصرہ ارسال

You are replying to: .