۳۱ اردیبهشت ۱۴۰۳ |۱۲ ذیقعدهٔ ۱۴۴۵ | May 20, 2024
سفیر

حوزہ /پاکستان کے نئے سفیر سے اسناد وصول کرتے ہوئے ایرانی صدر نے دونوں ممالک کے مابین سرحدوں کی مکمل حفاظت ، ایران اور پاکستان کے مابین تجارت اور مال کے تبادلے کی توسیع کی ضرورت پر دونوں ممالک کے مابین معاہدوں پر  عملدرآمد پر زور دیا. 

حوزہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق ، تہران ، حجت الاسلام والمسلمین حسن روحانی  نے ایران میں پاکستان کے نئے سفیر  رحیم حیات قریشی سے اسناد وصول کیں اور انہوں نے تمام شعبوں میں پاکستان کے ساتھ دوطرفہ تعلقات اور تعلقات کو فروغ دینے اور گہرا کرنے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ  امید ہے کہ مشترکہ سرحدوں کی سلامتی کو یقینی بنانے میں دونوں ممالک کے مابین تعاون جاری رہے گا اور اس میں مزید وسعت آئے گی۔

ڈاکٹر روحانی نے ایران اور پاکستان کے مابین کورونا وائرس کے پھیلنے کی وجہ سے سرحدی تبادلے میں پیدا ہونے والی بندش کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ بیماری کے پھیلنے کے چند ماہ بعد ہی ہیلتھ پروٹوکول کے مطابق سرحدوں کا کچھ حصہ دوبارہ کھولا جا چکا تھا  ، میں امید کرتا ہوں کہ کورونا سے پہلے کی طرح دونوں ممالک کی سرحدیں دوبارہ کھل جائیں گی اور سرحدی اور منڈیوں کی سرگرمیوں میں توسیع کے ساتھ ہی دونوں ممالک کے شہریوں کے مابین تجارت پہلے سے زیادہ سرگرم ہو جائے گی ۔

 حسن روحانی نے وزیر اعظم پاکستان سے اپنی ملاقاتوں اور رابطوں کا ذکر کرتے ہوئے دونوں ممالک کے مابین طے پانے والے معاہدوں پر عمل درآمد اور اس عمل درآمد کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ معاہدوں پر عمل درآمد سے تہران اور اسلام آباد کے مابین معاشی اور تجارتی تعلقات مزید فروغ پاسکتے ہیں۔

 ایرانی صدر کو اپنی اسناد پیش کرتے ہوئے، تہران میں پاکستان کے نئے سفیر نے ایران کو خطے میں ایک بہت اہم اور با اثر ملک قرار دیا  اور کہا کہ ایران کے ساتھ تعلقات پاکستان کے لئے بہت اہمیت کا حامل ہیں اور تمام پاکستانی حکام بالا ان تعلقات کی ترقی پر زور دیتے ہیں۔

رحیم حیات قریشی نے مزید کہا کہ پاکستان بین الاقوامی سطح پر  ایران کی حمایت جاری رکھے گا  اور پاکستان  ایران کے امن و سلامتی کو اپنے امن و سلامتی سمجھتا ہے ۔

تہران میں نئے پاکستانی سفیر نے ایران کے ساتھ تجارتی اور معاشی تعلقات کی ترقی کو اپنی اہم ترجیحات میں سے قرار دیتے ہوئے مزید کہا کہ دونوں ممالک کے مابین سرحدوں کی صورتحال جلد ہی کورونا سے پہلے کی صورتحال کی طرف لوٹ آئے گی اور تجارت کو مزید فروغ ملے گا ۔

لیبلز

تبصرہ ارسال

You are replying to: .